Mere Is Dida-E-Khun-Nab Ke Pichhe Pichhe

غزل
میرے اس دیدۂ خوں ناب کے پیچھے پیچھے
ایک بے خوابی ہے اس خواب کے پیچھے پیچھے
 
عمر بھر چین نہیں پاتے ہیں وہ لوگ کہ جو
بھاگتے رہتے ہیں اسباب کے پیچھے پیچھے
 
دل بھی اشکوں کے تعاقب میں بہا جاتا ہے
ایک صحرا سا ہے سیلاب کے پیچھے پیچھے
 
کچھ تو تا عمر رہے کسب ہنر میں مصروف
اور کچھ تمغہ و القاب کے پیچھے پیچھے
 
جس کی تکمیل پہ آنکھیں بھی گئیں دل بھی گیا
عمر گزری تھی اسی خواب کے پیچھے پیچھے
 
ان پہ زنداں کی فصیلوں کو بھی پیار آتا ہے
جو چلے آتے ہیں احباب کے پیچھے پیچھے
 
ہم تو اس درجہ ترے نام کے دیوانے ہیں
جیسے دوڑے کوئی سرخاب کے پیچھے پیچھ
 
Ghazal
Mere Is Dida-E-Khun-Nab Ke Pichhe Pichhe
Ek be-khwabi hai is khwab ke pichhe pichhe
 
Umr bhar chain nahin pate hain wo log ki jo
Bhagte rahte hain asbab ke pichhe pichhe
 
Dil bhi ashkon ke taaqub mein baha jata hai
Ek sahra sa hai sailab ke pichhe pichhe
 
Kuchh to ta-umr rahe kasb-e-hunar mein masruf
Aur kuchh tamgha-o-alqab ke pichhe pichhe
 
Jis ki takmil pe aankhen bhi gain dil bhi gaya
Umr guzri thi usi khwab ke pichhe pichhe
 
Un pe zindan ki fasilon ko bhi pyar aata hai
Jo chale aate hain ahbab ke pichhe pichhe
 
Hum to is darja tere nam ke diwane hain
Jaise daude koi surkhab ke pichhe pichhe

اپنا تبصرہ بھیجیں