Mere Betay Ne Aankhen Aik Nai Duniya Mein

Mere Betay Ne Aankhen Aik Nai Duniya Mein

Mere Betay Ne Aankhen Aik Nai Duniya Mein Kholi Hain
Usay wo khowab kaise do jinhain tabeer karne mein meri yeh umer guzari hai

Meri tazeem ki khatir wo in ko lay tou lay shayad
Magar jo zindagi usko mili hai us ke daman mein

Hamare ehd ki qadrain tou kia yaadin bhi kam kam hain
Anokhay phool hain uske neralay uske mosam hain

Khud apni zaat ki basti mein behna chahta hai wo
Nai dunya nay manzar mein rehna chahta hai wo

Samjh mein kuch nahi ata usay kaise bataon mein
Azal se aaj tak jitne mohabbta karne wale hain

Sabhi ki aik kahni hai nai lagti tou hai
Lekin haqiqat mein porani hai

Uasy kaise bataon mein mere baap ki baatin mujhe bhi
Aik aise waqt ka ahwal lagti theen

Jo aik bhola afsana tha
Mein jaib ke motarik seckon ko kahan rakhta keh yeh mere zamana tha

Nay bazar thay mere Currency aur thi meri wo basti aur thi meri
Phir yeh khula mujh per niya kuch bhi nahi shayad

Azal se aik manzar hai faqat aankhen badlti hain
Meri nazron ka dhokha tha keh yeh cheezain badlti hain

Usay kaise bataun mein keh yeh irfan ka lamha abhi us tak nahi poncha
Magar jis waqt ponche ga usay bhi apne betay ko yahi qisa sonane mein yahi 
dushwarion hoon gi

Keh wo bhi koi apni baat kehna chahta hoga
Nai dunyia nay manzar mein rehna chahta ho ga
Aur apni zaat ki basti mein behna chahta hoga

Mere betay ne aankhen aik nai duniya mein kholi hain
Usay wo khowab kaise do jinhain tabeer karne mein meri yeh umer guzari hai
نظم: علی شان کے لیے ایک نظم
میرے بیٹے نے آنکھیں ایک نئی دنیا میں کھولی ہیں
اُسے وہ خواب کیسے دو جنہیں تعبیر کرنے میں
میری یہ عمر گزری ہے

میری تظیم کی خاطر وہ ان کو لے تو لے شاید
مگر جو زندگی اُس کو ملی ہے اُس کے دامن میں

ہمارے عہد کی قدریں تو کیا یادیں بھی کم کم ہیں
انھوکھے پھول ہیں اُس کے نرالے اُس کے موسم ہیں

خود اپنی ذات کی بستی میں بہنا چاہتا ہے وہ
نئی دنیا نئے منظر میں رہنا چاہتا ہے وہ

سمجھ میں کچھ نہیں آتا اُسے کیسے بتاؤں میں
ازل سے آج تک جتنے محبت کرنے والے ہیں

سبھی کی ایک کہانی ہے نئی لگتی تو ہے
لیکن حقیقت میں پورانی ہے

اُسے کیسے بتاؤں میں میرے باپ کی باتیں مجھے بھی
ایک ایسے وقت کا احوال لگتی تھیں

جو ایک بھولا افسانہ تھا
میں اُس کی جیب کے متروق سیکوں کو کہاں رکھتا کہ یہ میرا زمانہ تھا

نئے بازار تھے میرے کرنسی اور تھی میری وہ بستی اور تھی میری
پھر یہ کھلا مجھ پر نیا کچھ بھی نہیں شاید

ازل سے ایک منظر ہے فقط آنکھیں بدلتی ہیں
میری نظروں کا دھوکہ تھا کہ یہ چیزیں بدلتی ہیں

اُسے کیسے بتاؤں میں کہ یہ عرفان کا لمحہ ابھی اُس تک نہیں پہنچا
مگر جس وقت پہنچے گا اُسے بھی اپنے بیٹے کو یہی قصہ سنانے میں یہی دشواریاں ہوں گی

کہ وہ بھی کوئی اپنی بات کہنا چاہتا ہوگا
نئی دنیا نئے منظر میں رہنا چاہتا ہوگا
اور اپنی ذات کی بستی میں بہنا چاہتا ہوگا

میرے بیٹے نے آنکھیں ایک نئی دنیا میں کھولی ہیں
اُسے وہ خواب کیسے دو جنہیں تعبیر کرنے میں
میری یہ عمر گزری ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں