Mein Unn Ki Waja Se Hoon Darja Zail Teen Ke Sath

Mein Unn Ki Waja Se Hoon Darja Zail Teen Ke Sath

Mein Unn Ki Waja Se Hoon Darja Zail Teen Ke Sath
Khuda ke sath sahifay ke sath, deen ke sath

Yahi bohat hai, ziyarat ho unn ki aankhon ki
Mujhe bithao madinay ke zaireen ke sath

Amanton ke tahaffuz ki rasam ke hain amiin
Hamara rabt-e-musalsal hai aik ameen ke sath

Zameen zaad agar koi aur hai to bata
Jo be hijab raha arsh ke makeen ke sath

Woh badshah, ghulamon mein aisay rehta tha
Ufaq peh jaise jura hai falak, zamen ke sath

Yahi nahi keh utara tha sirf husan-e-tamam
Khuda ne ishq utara tha uss haseen ke sath

Sawal kitne baras tak zameen thi rashk-e-falak
Jawab sirf tresath baras yaqeen ke sath

Mein unn ki waja se hoon darja zail teen ke sath
Khuda ke sath sahifay ke sath, deen ke sath
غزل
میں اُن کی وجہ سے ہوں درج ذیل تین کے ساتھ
خدا کے ساتھ صحیفے کے ساتھ دین کے ساتھ

یہی بہت ہے ، زیارت ہو اُن کی آنکھوں کی
مجھے بٹھاؤ مدینے کے زائرین کے ساتھ

امانتوں کے تحفظ کی رسم کے ہیں امیں
ہمارا ربطِ مسلسل ہے ایک امین کے ساتھ

زمین زاد اگر کوئی اور ہے تو بتا
جو بے حجاب رہا عرش کےمکین کے ساتھ

وہ بادشاہ، غلاموں میں ایسے رہتا تھا
اُفق پہ جیسے جڑا ہے فلک ، زمین کے ساتھ

یہی نہیں کہ اُتارا تھا صرف حسنِ تمام
خدا نے عشق اتارا تھا اُس حسین کے ساتھ

سوال کتنے برس تک زمیں تھی رشکِ فلک
جواب صرف تریسٹھ برس یقین کے ساتھ

میں اُن کی وجہ سے ہوں درج ذیل تین کے ساتھ
خدا کے ساتھ صحیفے کے ساتھ دین کے ساتھ
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں