Mein Bazam Tasawwur Mein Usay Laye Hoye Tha

Mein Bazam Tasawwur Mein Usay Laye Hoye Tha

Mein Bazam Tasawwur Mein Usay Laye Hoye Tha
Jo saath nah aane ki qasam khaye hoye tha

Dil juram mohabbat se kabhi reh na saka baz
Halakeh bohat baar saza paye hoye tha

Hum chahte thay koi sonay baat hamari
Yeh shooq hamein ghar se nikalwaye hoye tha

Hone nah diya khud peh musallat mein ne
Jis shakhs ko ji jan se apnaye hoye tha

Bethe thay shaoor aaj mere pass woh gum som
Mein khoye hoye tha nah unhein paye hoye tha

Mein bazam tasawwur mein usay laye hoye tha
Jo saath nah aane ki qasam khaye hoye tha
غزل
میں بزم تصور میں اُسے لائے ہوئے تھا
جو ساتھ نہ آنے کی قسم کھائے ہوئے تھا

دل جرم محبت سے کبھی رہ نہ سکا باز
حالانکہ بہت بار سزا پائے ہوئے تھا

ہم چاہتے تھے کوئی سنے بات ہماری
یہ شوق ہمیں گھر سے نکلوائے ہوئے تھا

ہونے نہ دیا خود پہ مسلط اُسے میں نے
جس شخص کو جی جان سے اپنائے ہوئے تھا

بیٹھے تھے شعور آج مرے پاس وہ گم صم
میں کھوئے ہوئے تھا نہ انہیں پائے ہوئے تھا

میں بزم تصور میں اُسے لائے ہوئے تھا
جو ساتھ نہ آنے کی قسم کھائے ہوئے تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں