Main Yeh Nahi Kehta Ky Usay Peyar Nahi Hai

غزل
میں یہ نہیں کہتا کے اُسے پیار نہیں ہے
لیکن وہ میرے جتنا سمجھدار نہیں ہے

ڈرتا ہوں کسی دن وہ مجھے چھوڑ نا جائے
اُس کو میری دولت سے سروکار نہیں ہے

وہ جسم برہنہ ہو مگر عکس ہو ملبوس
یہ آئینہ اتنا بھی حیاء دار نہیں ہے

ہم یار تھے یاروں کو بھی بخشا نہیں اُس نے
وہ صرف تمہارا ہی گنہگار نہیں ہے

حوروں میں کھڑا دیکھ کے حیران ہوں اُس کو
کہتا تھا کہ جنت کا طلب گار نہیں ہے

وہ روک کے رکھتا ہے ہمیں رات گئے تک
جیسے کہ ہمارا کوئی گھر بار نہیں ہے
Ghazal
Main Yeh Nahi Kehta Ky Usay Peyar Nahi Hai
Liken wo meray jitna samjh-dar nahi hai

Darta hun kisi din wo mujhe chor na jaye
Usko meri dollat sy koi saro-kaar nahi hai

Wo jism barhna ho magar eqas ho mulboos
Yeh ayena itna bhi haya-dar nahi hai

Hum yaar thay yaroo ko bhi bakhsha nahi us nay
Wo sirf tumhara hi gunaghar nahi hai

Horowon main khada dekh ky hiran hun us ko
Kehta tha keh jannat ka talab-gaar nahi hai

Wo rok ky rekhta hai humein raat gay tak
Jaisy keh hamara koi ghar baar nahi hai

اپنا تبصرہ بھیجیں