Kya Ishq Ek Zindagi-E-Mustaar Ka

نظم:عشق

عشق ایک زندگی مستعار کا
کیا عشق پائیدار سے ناپائیدار کا

وہ عشق جس کی شمع بجھا دے اجل کی پھونک
اس میں مزہ نہیں تپش و انتظار کا

میری بساط کیا ہے تب و تاب یک نفس
شعلہ سے بے محل ہے الجھنا شرار کا

کر پہلے مجھ کو زندگیٔ جاوداں عطا
پھر ذوق و شوق دیکھ دل بے قرار کا

کانٹا وہ دے کہ جس کی کھٹک لا زوال ہو
یارب وہ درد جس کی کسک لا زوال ہو

Nazam:Ishq
Kya Ishq Ek Zindagi-E-Mustaar Ka
kya ishq paedar se na-paedar ka
 
wo ishq jis ki shama bujha de ajal ki phunk
us mein maza nahin tapish o intizar ka
 
meri bisat kya hai tab-o-tab-e-yak-nafas
shoala se be-mahal hai ulajhna sharar ka
 
kar pahle mujh ko zindagi-e-jawedan ata
phir zauq o shauq dekh dil-e-be-qarar ka
 
kanta wo de ki jis ki khatak la-zawal ho
ya-rab wo dard jis ki kasak la-zawal ho

اپنا تبصرہ بھیجیں