Kuch Es Tarha Se Kisi Nay Kaha Khuda Hafiz

Kuch Es Tarha Se Kisi Nay Kaha Khuda Hafiz

Kuch Es Tarha Se Kisi Nay Kaha Khuda Hafiz
Jaise bol raha ho khuda hafiz

Mein aik bar pareshan howa tha apne liye
Jab us ne rotay howay kaha tha khuda hafiz

Tu jis ke pass bhi ja, ja tujhy ijazat hai
Tujhy khuda ke hawalay kia khuda hafiz

Mujhe tu kaise khuda ke sapurd kar raha hai
Mein tere zimma hoon, tu keh raha hai khuda hafiz

Mein dharain mar ke roya , kisi ki yaad ai
Jahaan kahi bhi suna ya parha khuda hafiz

Makaan girtay rahay log foat hotay rahay
Mein dekhta raha, kehta raha khuda hafiz

Phir aik roz muqadar se haar mani gai
Jabin choom kar bola gaya, khuda hafiz

Mein us se mil ke usay dukh sunane wala tha
Salam kartay howay jis ne kaha khuda hafiz

Kuch es tarha se kisi nay kaha khuda hafiz
Jaise bol raha ho khuda hafiz
غزل
کچھ اس طرح سے کسی نے کہا خدا حافظ
جیسے بول رہا ہو خدا خدا حافظ

میں ایک بار پریشان ہو تھا اپنے لیے
جب اُس نے روتے ہوئے کہا تھا خدا حافظ

تو جس کے پاس بھی جا، جا تجھے اجازت ہے
تجھے خدا کے حوالے کیا خدا حافظ

مجھے تو کیسے خدا کے سپرد کر رہا ہے
میں تیرے زمہ ہوں، تو کہہ رہا ہے خدا حافظ

میں دھاڑیں مار کے رویا ، کسی کی یاد آئی
جہاں کہیں بھی سنا، یا پڑھا خدا حافظ

مکان گرتے رہے لوگ فوت ہوتے رہے
میں دیکھتا رہا، کہتا رہا خدا حافظ

پھر ایک روز مقدر سے ہار مانی گئی
جبین چوم کے بولا گیا، خدا حافظ

میں اُس سےمل کے اُسے دکھ سنانے والا تھا
سلام کرتےہوئے جس نے کہا خدا حافظ

کچھ اس طرح سے کسی نے کہا خدا حافظ
جیسے بول رہا ہو خدا خدا حافظ

اپنا تبصرہ بھیجیں