Kitni Raatin Kaat Chuka Hun Per Wo Wasl Ka Din| Tehzeeb hafi Ghazal

Kitni Raatin Kaat Chuka Hun Per Wo Wasl Ka Din

Ghazal
Kitni Raaten Kaat Chuka Hun Per Wo Wasl Ka Din
Es daryaa se pehle kitnay jungle atay hain

Hamain tou neend bhi ati hai tou adhi ati hai
Wo kaise hain jin ko khawab mukamal aate hain

Es raste per ped bhi atay hain us ne pocha
Jal kar khushbo denay walay sandal atay hain

Kon hai jo es dil mein khamoshi se utaray ga
Dekho es awaz pe kitnay pagal atay hain

Aik se barh kar aik sawari asap aur feel bhi hain
Janay kyu hum teri taraf paidal atay hain

Kitne phool khelay hain hamko es se kia lena
Ham tou kantay chun’nay ke liye jungle atay hain

Pehle pehl mere dil ko wo aik hi acha lagta tha
Ab tou gaon mein har network ke signal atay hain

Kitni raatin kaat chuka hun per wo wasl ka din
Es daryaa se pehle kitnay jungle atay hain
غزل
کتنی راتیں کاٹ چکا ہوں پر وہ وصل کا دن
اس دریا سے پہلے کتنے جنگل آتے ہیں

ہمیں تو نیند بھی آتی ہے تو آدھی آتی ہے
وہ کیسے ہیں جن کو خواب مکمل آتے ہیں

اس رستے پر پیڑ بھی آتے ہیں اُس نے پوچھا
جل کر خوشبو دینے والے صندل آتے ہیں

کون ہے جو اس دل میں خاموشی سے اترے گا
دیکھو اس آواز پہ کتنے پاگل آتے ہیں

ایک سے بڑھ کر ایک سواری اسپ اور فیل بھی ہیں
جانے کیوں ہم تیری طرف پیدل آتے ہیں

کتنے پھول کھلے ہیں ہم کو اس سے کیا لینا
ہم تو کانٹے چننے کے لیے جنگل آتے ہیں

پہلے پہل میرے دل کو وہ ایک ہی اچھا لگتا تھا
اب تو گاؤں میں ہر نیٹ ورک کے سگنل آتے ہیں

کتنی راتیں کاٹ چکا ہوں پر وہ وصل کا دن
اس دریا سے پہلے کتنے جنگل آتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں