Khuli Aankhon Mein Sapna Jhankta Hai

Khuli Aankhon Mein Sapna Jhankta Hai

Khuli Aankhon Mein Sapna Jhankta Hai
Woh soya hai keh kuch kuch jagta hai

Teri chahat ke bheegay jungalon mein
Mera tan moor ban kar nachta hai

Mujhe har kaifiyat mein kyun nah samjhe
Woh mere sab hawale janta hai

Mein uss ki dastaras mein hoon magar woh
Mujhe meri raza se mangta hai

Kisi ke dehaan mein dooba howa dil
Bahane se mujhe bhi talta hai

Sarak ko chhor kar chalna paray ga
Keh mere ghar ka kacha rasta hai

Khuli aankhon mein sapna jhankta hai
Woh soya hai keh kuch kuch jagta hai
غزل
کھلی آنکھوں میں سپنا جھانکتا ہے
وہ سویا ہے کہ کچھ کچھ جاگتا ہے

تری چاہت کے بھیگے جنگلوں میں
مرا تن مور بن کر ناچتا ہے

مجھے ہر کیفیت میں کیوں نہ سمجھے
وہ میرے سب حوالے جانتا ہے

میں اُس کی دسترس میں ہوں مگر وہ
مجھے میری رضا سے مانگتا ہے

کسی کے دھیان میں ڈوبا ہوا دل
بہانے سے مجھے بھی ٹالتا ہے

سڑک کو چھوڑ کر چلنا پڑے گا
کہ میرے گھر کا کچا راستہ ہے

کھلی آنکھوں میں سپنا جھانکتا ہے
وہ سویا ہے کہ کچھ کچھ جاگتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں