Khudi Who Bahir Hai Jis Ka Koi Kinara Nahi

خودی وہ بحر ہے جس کا کوئی کنارہ نہیں
تو آب جو اسے سمجھا اگر تو چارہ نہیں
طلسم گنبد گردوں کو توڑ سکتے ہیں
زجاج کی یہ عمارت ہے سنگ خارہ نہیں
خودی میں ڈوبتے ہیں پھر ابھر بھی آتے ہیں
مگر یہ حوصلۂ مرد ہیچ کارہ نہیں
ترے مقام کو انجم شناس کیا جانے
کہ خاک زندہ ہے تو تابع ستارہ نہیں
یہیں بہشت بھی ہے، حور و جبرئیل بھی ہے
تری نگہ میں ابھی شوخی نظارہ نہیں
مرے جنوں نے زمانے کو خوب پہچانا
وہ پیرہن مجھے بخشا کہ پارہ پارہ نہیں
غضب ہے عین کرم میں بخیل ہے فطرت
کہ لعل ناب میں آتش تو ہے شرارہ نہیں
Khudi Who Bahir Hai Jis Ka Koi Kinara Nahi
Tu Aab.e.Jo Ose Samjha Agar Tu Chara Nahi

Talism Gumbad.e.Gardon Ko Tor Sahty Hain
Zajaj Ki Yeh Imarat Hai Sang.e.Khara Nahi

Khudi Mein Doobty Hai Phir Ubhar Bhi Aty Hain
Magar Yeh Hosla.e.Mard Heech Kara Nahi

Tere Maqam Ko Anjum Shanas Kya Jane
Khak Zinda Hai Tu Tabeh Sitara Nahi

Yehi Behshat Bhi Hai Hoor.o.Jibril Bhi Hai
Teri Nigah Mein Abhi Shokhi Nazara Nahi

Ere Janun Ne Zamane Ko Khoob Pehchana
Who Perahn Mujhy Bkhsha Keh Para Para Nahi

Ghazab Hai Ain Qaram Mein Bkheel Hai Fitrat
Keh Lal Nab Mein Atish To HaiShara Nahi

اپنا تبصرہ بھیجیں