Khud Se To Aae Na The Ahl-E-Zamin Sunta Hai

غزل
خود سے تو آئے نہ تھے اہل زمیں سنتا ہے
کیوں انہیں بھیج کے اب ان کی نہیں سنتا ہے

یہ اگر سچ ہے تو پھر آج اسے ثابت کر
کہ سنا ہے تو سر عرش بریں سنتا ہے

وہ جو سنتا نہیں تیری تو گلا کیسا ہے
تو بھی کب اس کی مرے خاک نشیں سنتا ہے

بگڑے بچے کی طرح شور مچائے جائے
یہ مرا دل کہ کسی کی بھی نہیں سنتا ہے

حسن کے حسن تغافل سے پریشان نہ ہو
غور سے بات کہاں کوئی حسیں سنتا ہے

بھوک افلاس دغا جرم کی بہتات وصیؔ
پھر بھی لگتا ہے تجھے کوئی کہیں سنتا ہے
 
Ghazal
Khud Se To Aae Na The Ahl-E-Zamin Sunta Hai
Kyun unhen bhej ke ab un ki nahin sunta hai

Ye agar sach hai to phir aaj ise sabit kar
Ki suna hai tu sar-e-arsh-e-barin sunta hai

Wo jo sunta nahin teri to gila kaisa hai
Tu bhi kab us ki mere khak-nashin sunta hai

Bigde bachche ki tarah shor machae jae
Ye mera dil ki kisi ki bhi nahin sunta hai

Husn ke husn taghaful se pareshan na ho
Ghaur se baat kahan koi hasin sunta hai

Bhuk iflas dagha jurm ki bohtat ‘wasi’
Phir bhi lagta hai tujhe koi kahin sunta hai

اپنا تبصرہ بھیجیں