Khamosh Rahe Kar Harifon Se Intaqam Liye

Khamosh Rahe Kar Harifon Se Intaqam Liye

Khamosh Rahe Kar Harifon Se Intaqam Liye
Youn intaqam ke badlay bhi ehtram liye

Ham jaise log tou apne bhi kaam aa na sakay
Hamare naam se logo ne kitne kaam liye

Usi janun mein kisi aur ko bhi khona parha
Kisi ko choom rahe thay kisi ka naam liye

Lakir khanchi gai log par kartay rahe
Kuch apna Allah uthay kuch apna raam liye

Usay aik mehngi hassina ne sastay sharon se
 Faqat kalam kia aur kai kalam liye

Inhain bataon yahaan raaton walay so rahay hain
Katora pait rahay hain jo aik shaam liye

Hamara halqa ahbab youn bhi kafi hai
Jo gir rahe thay kahin se bhi ham ne tham liye

Mujhe bata du afkar kitna qamti hai
Mujhe bata tou sahi mere kitnay daam liy

Khamosh rahe kar harifon se intaqam liye
Youn intaqam ke badlay bhi ehtram liye
غزل
خاموش رہے کر حریفوں سے انتقام لیے
یوں انتقام کے بدلے بھی احترام لیے

ہم جیسے لوگ تو اپنے بھی کام آنہ سکے
ہمارے نام سے لوگوں نے کتنے کام لیے

اُسی جنوں میں کسی اور کو بھی کھونا پڑا
کسی کو چوم رہے تھے کسی کا نام لیے

لکیر کھنچی گئی لوگ پار کرتے رہے
کچھ اپنا اللہ اٹھائے کچھ اپنا رام لیے

اُسے ایک مہنگی حسینہ نے سستے شاعروں سے
فقط کلام کیا اور کئی کلام لیے

انھیں بتاوں یہاں راتوں والے سو رہے ہیں
کٹورا پیٹ رہے ہیں جو ایک شام لیے

ہمارا حلقہ احباب یوں بھی کافی ہے
جو گر رہے تھے کہیں سے بھی ہم نے تھام لیے

مجھے بتا دو افکار کتنا قیمتی ہے
مجھے بتا تو سہی میرے کتنے دام لیے

خاموش رہے کر حریفوں سے انتقام لیے
یوں انتقام کے بدلے بھی احترام لیے

اپنا تبصرہ بھیجیں