Kat Chuki Thi Ye Nazar Sab Se Bahut Din Pahle

غزل
کٹ چکی تھی یہ نظر سب سے بہت دن پہلے
میں نے دیکھا تھا تجھے اب سے بہت دن پہلے

آج تک گوش بر آواز ہوں سناٹے میں
حرف اترا تھا ترے لب سے بہت دن پہلے

میں نے مستی میں یہ پوچھا تھا کہ ہستی کیا ہے
رفتگان مے و مشرب سے بہت دن پہلے

مسلک عشق فقیروں نے کیا تھا آغاز
اے مبلغ ترے مذہب سے بہت دن پہلے

پھر کسی مے کدۂ حسن میں ویسی نہ ملی
جیسی پی تھی کسی خوش لب سے بہت دن پہلے

ایک شخص اور ملا تھا مجھے تیرے جیسا
تو نہ تھا ذہن میں جب، جب سے بہت دن پہلے

حضرت شیخ کا اک رند سے کیسا رشتہ
ہاں ملے تھے کسی مطلب سے بہت دن پہلے

کیا تری سادگیٔ طبع نئی شے ہے شعورؔ
لوگ چلتے تھے اسی ڈھب سے بہت دن پہلے
Ghazal
Kat Chuki Thi Ye Nazar Sab Se Bahut Din Pahle
Main ne dekha tha tujhe ab se bahut din pahle

Aaj tak gosh-bar-awaz hun sannate mein
Harf utra tha tere lab se bahut din pahle

Main ne masti mein ye puchha tha ki hasti kya hai
Raftgan-e-mai-o-mashrab se bahut din pahle

Maslak-e-ishq faqiron ne kiya tha aaghaz
Ai mablagh tere mazhab se bahut din pahle

Phir kisi mai-kada-e-husn mein waisi na mili
Jaisi pi thi kisi khush-lab se bahut din pahle

Ek shakhs aur mila tha mujhe tere jaisa
Tu na tha zehn mein jab, jab se bahut din pahle

Hazrat-e-shaikh ka ek rind se kaisa rishta
Han mile the kisi matlab se bahut din pahle

Kya teri sadgi-e-taba nai shai hai ‘shuur
Log chalte the isi dhab se bahut din pahle

اپنا تبصرہ بھیجیں