Kaun Kahta Hai Ki Maut Aai To Mar Jaunga

کون کہتا ہے کہ موت آئی تو مر جاؤں گا
میں تو دریا ہوں سمندر میں اتر جاؤں گا
تیرا در چھوڑ کے میں اور کدھر جاؤں گا
گھر میں گھر جاؤں گا صحرا میں بکھر جاؤں گا
تیرے پہلو سے جو اٹھوں گا تو مشکل یہ ہے
صرف اک شخص کو پاؤں گا جدھر جاؤں گا
اب ترے شہر میں آؤں گا مسافر کی طرح
سایۂ ابر کی مانند گزر جاؤں گا
تیرا پیمان وفا راہ کی دیوار بنا
ورنہ سوچا تھا کہ جب چاہوں گا مر جاؤں گا
چارہ سازوں سے الگ ہے مرا معیار کہ میں
زخم کھاؤں گا تو کچھ اور سنور جاؤں گا
اب تو خورشید کو گزرے ہوئے صدیاں گزریں
اب اسے ڈھونڈنے میں تا بہ سحر جاؤں گا
زندگی شمع کی مانند جلاتا ہوں ندیمؔ
بجھ تو جاؤں گا مگر صبح تو کر جاؤں گا
kaun kahta hai ki maut aai to mar jaunga
main to dariya hun samundar mein utar jaunga

tera dar chhod ke main aur kidhar jaunga
ghar mein ghir jaunga sahra mein bikhar jaunga

tere pahlu se jo utthunga to mushkil ye hai
sirf ek shakhs ko paunga jidhar jaunga

ab tere shahr mein aaunga musafir ki tarah
saya-e-abr ki manind guzar jaunga

tera paiman-e-wafa rah ki diwar bana
warna socha tha ki jab chahunga mar jaunga

chaarasazon se alag hai mera mear ki main
zakhm khaunga to kuchh aur sanwar jaunga

ab to khurshid ko guzre hue sadiyan guzrin
ab use dhundne main ta-ba-sahar jaunga

zindagi shama ki manind jalata hun ‘nadim’
bujh to jaunga magar subh to kar jaunga

اپنا تبصرہ بھیجیں