Junoon Mein Kar Diya Tha Kab Kuch Nahi Pata Tha

Junoon Mein Kar Diya Tha Kab Kuch Nahi Pata Tha

Junoon Mein Kar Diya Tha Kab Kuch Nahi Pata Tha
Mein ishq mein mubtala tha tab kuch nahi pata tha

Pata chala jab pata kiya sab se uss ke baray
Mujhe bohat kuch pata tha sab kuch nahi pata tha

Yeh dhoondhtay ho jo ab junoon se faraar ki rah
Tum iss taraf aaye kyun thay jab kuch nahi pata tha

Samjh nahi aa rahi thi rowon, phirowon keh sowon
Thi hijr ki pehli pehli shab kuch nahi pata tha

Pata tha koi tu poochay ga kuch khayab ke bech
Aur uss ne kehna hi tha par, ab kuch nahi pata tha

Mein choomta tha wo hath deewana waar najmi
Woh khawab tha ishq ya adab kuch nahi pata tha

Junoon mein kar diya tha kab kuch nahi pata tha
Mein ishq mein mubtala tha tab kuch nahi pata tha
غزل
جنون میں کردیا تھا کب کچھ نہیں پتا تھا
میں عشق میں مبتلا تھا تب کچھ نہیں پتا تھا

پتا چلا جب پتا کیا سب سے اُس کے بارے
مجھے بہت کچھ پتا تھا سب کچھ نہیں پتا تھا

یہ ڈھونڈھتے ہو جو اب جنون سے فرار کی راہ
تم اِس طرف آئے کیوں تھے جب کچھ نہیں پتا تھا

سمجھ نہیں آرہی تھی رؤں، پھروں کہ سوؤں
تھی ہجر کی پہلی پہلی شب کچھ نہیں پتا تھا

پتا تھا کوئی تو پوچھے گا کچھ خیاب کے بیچ
اور اُس نے کہنا ہی تھا پر، اب کچھ نہیں پتا تھا

میں چھومتا تھا وہ ہاتھ دیوانہ وار نجمی
وہ خواب تھا عشق یا ادب کچھ نہیں پتا تھا

جنون میں کردیا تھا کب کچھ نہیں پتا تھا
میں عشق میں مبتلا تھا تب کچھ نہیں پتا تھا
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں