Jab Bhi Wo Shakhs “WASI” Mujhse Khafa Ho Jaye,

نظم
جب بھی وہ شخص ”وصی” مجھ سے جدا ہو جائے
اک سنامی میرے سینے میں بپا ہو جائے

دل میں پھر کچھ نہیں ہوگا خلاؤں کے سوا
تو کسی روز اگر مجھ سے جدا ہوجائے

وہ بہت رکھتا ہے چاہت کی نمازوں کا حساب
وہ تو اک سجدہ نہ بخشے جو قضا ہو جائے

تپھکیاں دے کر سولاتی ہیں تیری یادیں ہمیں
نیند جس رات بھی ہم سے خفا ہو جائے

یہ تقاضہ ہے محبت کی عبادت کا ”وصی
اُس کو چھو لینے سے اک رکن ادا ہو جائے
 
Nazam
Jab Bhi Wo Shakhs “WASI” Mujhse Khafa Ho Jaye
Aik sunami mery seeny mai bapa ho jaye

Dil mai phir kuch nahi hoga khalaon k siwa
To kisi roz agar mujhse juda hojaye

Wo bahut rakhta hai chahat ki namazan ka hisab
Wo to aik sajda na bakhshy jo qaza ho jaye

Thapkian de ker sulati hain teri yaaden hamen
Neend jis raat bhi hum se khafa ho jaye

Ye taqaza hai muhabbat ki ibadat ka “WASI
Usko chuu leny se aik rukn adaa ho jaye

اپنا تبصرہ بھیجیں