Jab Bhi Khalwat Mein Wo Yaad Aaega

شاعر:احسان دانش
غزل
جب بھی خلوت میں وہ یاد آئے گا
وقت کا سیل ٹھہر جائے گا

 

چاند تم دیکھ رہے ہو جس کو
یہ بھی آنسو سا ڈھلک جائے گا

 

ایک دو موڑ ہی مڑ کر انساں
بام گردوں کی خبر لائے گا

 

میں نے دیکھے ہیں چمن بے پردہ
کوئی گل کیا مرے منہ آئے گا

 

حسن سے دور ہی رہنا بہتر
جو ملے گا وہی پچھتائے گا

 

اور کچھ دیر ستارو ٹھہرو
اس کا وعدہ ہے ضرور آئے گا

 

ان کی زلفوں کی مہک لے دانشؔ
اس دھندلکے کو کہاں پائے گا
 
Ghazal
Jab Bhi Khalwat Mein Wo Yaad Aaega
Waqt ka sail thahar jaega

 

Chand tum dekh rahe ho jis ko
Ye bhi aansu sa dhalak jaega

 

Ek do mod hi mud kar insan
Baam-e-gardun ki khabar laega

 

Main ne dekhe hain chaman be-parda
Koi gul kya mere munh aaega

 

Husn se dur hi rahna behtar
Jo milega wahi pachhtaega

 

Aur kuchh der sitaro thahro
Us ka wada hai zarur aaega

 

Un ki zulfon ki mahak le ‘danish’
Is dhundalke ko kahan paega

اپنا تبصرہ بھیجیں