Humaray Anay Walay Din Khawab Main Badal Gaye

غزل
ہمارے آنے والے دن تو خواب میں بدل گئے
مگر جناب آپ کس حساب میں بدل گئے

وہ با حیاء حیاء کے اُس مقام پر پہنچ گئے
کہ اس کے نین نقش تک نقاب میں پہنچ گئے

وہ جنگ رک گئی تو ٹنک رنگ پھنکنے لگے
کمان میں جو تیر تھے گلاب میں بدل گئے

وہ میرے پاس سے اُٹھا تو میرا رزق اُٹھ گیا
دھن میں جو نوالے تھے لعاب میں بدل گئے

نجانے کس کے ہاتھ آ گیا نظام ابروباد
ہمارے گاؤں کے کنوئیں شراب میں بدل گئے

Ghazal
Humaray Anay Walay Din Khawab Main Badal Gaye
Magar Janaab Ap Kis Hissab Main Badal Gaye

Wo Ba Haya، Haya Ky Us Muqam Per Ponnch Gaye
Keh Us Ky Nain Naqsh Tak Naqab Main Badal Gaye

Wo Jang Ruk Gae To Tank Rang Phinkny Lagy
Kaman Main Jo Teer Thy Gulab Main Badal Gaye

Wo Mary Pass Sy Utha Tu Mera Rizq Uth Gaya
Dahan Main Jo Nwalay Thay luaab Main Badal Gaye

Najany Kis Ky Hath Aa Gaya Nizam-E-Abro-E-Baad
Humary Gaon Ky kunwain Sharab Main Badal Gaye

اپنا تبصرہ بھیجیں