Ho Gaye Din Jenhain Bhaye Hoye| Shaoor Poetry

Ho Gaye Din Jenhain Bhaye Hoye| Shaoor Poetry

Ho Gaye Din Jenhain Bhaye Hoye
Aaj kal hain woh yaad aaye hoye

Mein ne raatein bohat guzari hain
Sirf dil ka diya jalaye hoye

Aik ussi shakhs ka nahi mazkoor
Hum zamane ke hain sataye hoye

Sonay aatay hain log basti mein
Sare din ke thakkay thakaye hoye

Muskuraye baghair bhi woh hont
Nazar aatay hain muskuraye hoye

Go falak peh nahi palak peh sahi
Do sitare hain jagmaye hoye

Aa shaoor aur koi baat karo
Hain yeh qissay sune sunaye hoye

Ho gaye din jenhain bhaye hoye
Aaj kal hain woh yaad aaye hoye
غزل
ہوگئے دن جنہیں بھائے ہوئے
آج کل ہیں وہ یاد آئے ہوئے

میں نے راتیں بہت گزاری ہیں
صرف دل کا دیا جلائے ہوئے

ایک اُسی شخص کا نہیں مذکور
ہم زمانے کے ہیں ستائے ہوئے

سونے آتے ہیں لوگ بستی میں
سارے دن کے تھکے تھکائے ہوئے

مسکرائے بغیر بھی وہ ہونٹ
نظر آتے ہیں مسکرائے ہوئے

گو فلک پہ نہیں پلک پہ سہی
دو ستارے ہیں جگمگائے ہوئے

اے شعور اور کوئی بات کرو
ہیں یہ قصے سنے سنائے ہوئے

ہوگئے دن جنہیں بھائے ہوئے
آج کل ہیں وہ یاد آئے ہوئے

اپنا تبصرہ بھیجیں