Hansi Chupa Bhi Gaya Nazar Mila Bhi Gaya

Hansi Chupa Bhi Gaya Nazar Mila Bhi Gaya

Hansi Chupa Bhi Gaya Nazar Mila Bhi Gaya
Yeh aik jhalak ka tamasha jigar jala bhi gaya

Utha tou ja bhi chuka tha ajab mehman tha
Sadain day ke mujhe neend se bhi jaga gaya

Kia gazab howa jo andhere mein jal uthi bajli
Badan kis ka tilismaat kuch dekha bhi gaya

Aya koi lab-e-baam shaam dhalne lagi
Wafor shoq sy aankhon mein khoon a bhi gaya

Hawa thi ghari ghata thi hina ki khushbo thi
Aik raat ka qaisa lahoo rola bhi gaya

Chalo munir chalin ab yahaan rahain bhi tou kia
Wo sang dil tou yahaan se kahaib chala bhi gaya

Hansi chupa bhi gaya nazar mila bhi gaya
Yeh aik jhalak ka tamasha jigar jala bhi gaya
غزل
ہنسی چھپا بھی گیا اور نظر ملا بھی گیا
یہ ایک جھلک کا تماشہ جگر جلا بھی گیا

اٹھا تو جا بھی چکا تھا عجیب مہماں تھا
صدائیں دے کے مجھے نیند سے جگا بھی گیا

کیا غضب ہوا جو اندھیرے میں جل اٹھی بجلی
بدن کسی کا طلسمات کچھ دکھا بھی گیا

آیا کوئی لب بام شام ڈھلنے لگی
وفور شوق سے آنکھوں میں خون آ بھی گیا

ہوا تھی گہری گھٹا تھی حنا کی خوشبو تھی
ایک رات کا قصہ لہو رلا بھی گیا

چلو منیرؔ چلیں اب یہاں رہیں بھی تو کیا
وہ سنگ دل تو یہاں سے کہیں چلا بھی گیا

ہنسی چھپا بھی گیا اور نظر ملا بھی گیا
یہ ایک جھلک کا تماشہ جگر جلا بھی گیا

اپنا تبصرہ بھیجیں