December Mujhe Raas Aata Nahi

دسمبر مجھے راس آتا نہی
کئی سال گزرے
کئی سال بیتے
شب و روز کی گردشوں کا تسلسل
دل و جان میں سانسوں کی پرتیں الٹے ہوئے
زلزلوں کی طرح ہانپتا ہے
چٹختے ہوئے خواب
آنکھوں کی نازک رگیں چھیلتے ہیں
مگر میں اک سال کی گود میں جاگتی صبح کو
بے کراں چاہتوں سے اٹی زندگی کی دعا دے کر
اب تک وہی جستجو کا سفر کر رہا ہوں
گزرتا ہوا سال جیسا بھی گزرا
مگر سال کے آخری دن
نہایت کٹھن ہیں
مرے ملنے والو
نئے سال کی مسکراتی ہوئی صبح گر ہاتھ آئے
تو ملنا
کہ جاتے ہوئے سال کی ساعتوں میں
یہ بجھتا ہوا دل
دھڑکتا تو ہے مسکراتا نہیں
دسمبر مجھے راس آتا نہیں
December Mujhe Ras Aata Nahin
 
kai sal guzre
kai sal bite
 
shab-o-roz ki gardishon ka tasalsul
dil-o-jaan mein sanson ki parten ulTe hue
 
zalzalon ki tarah hanpta hai
chatakhte hue khwab
 
aankhon ki nazuk ragen chhilte hain
magar main ek sal ki god mein jagti subh ko
 
be-karan chahaton se ati zindagi ki dua de kar
ab tak wahi justuju ka safar kar raha hun
 
guzarta hua sal jaisa bhi guzra
magar sal ke aakhiri din
 
nihayat kathin hain
mere milne walo
 
nae sal ki muskuraati hui subh gar hath aae
to milna
 
ki jate hue sal ki saaton mein
ye bujhta hua dil
 
dhadakta to hai muskuraata nahin
december mujhe ras aata nahin

اپنا تبصرہ بھیجیں