Chara Saazon Ki Azeeyat Nahi Dekhi Jati

Chara Saazon Ki Azeeyat Nahi Dekhi Jati

Chara Saazon Ki Azeeyat Nahi Dekhi Jati
Tere Bemar Ki Halat Nahi Dekhi Jati

Dene wale ki mashiyat peh hai sab kuch mauqoof
Mangne wale ki hajat nahi dekhi jati

Din behil jata ha lekin tere deewanon ki
Sham hoti hai to wehshat nahi dekhi jati

Tamkanat se tujhe rukhsat to kiya hai lekin
Hum se unn aankhono ki hasrat nahi dekhi jati

Kon utra hai yeh aafaq ki pehnai mein
Aaina khane ki herat nahi dekhi jati

Chara saazon ki azeeyat nahi dekhi jati
Tere bemar ki halat nahi dekhi jati
غزل
چارہ سازوں کی اذیت نہیں دیکھی جاتی
تیرے بیمار کی حالت نہیں دیکھی جاتی

دینے والے کی مشیت پہ ہے سب کچھ موقوف
مانگنے والے کی حاجت نہیں دیکھی جاتی

دن بہل جاتا ہے ہے لیکن ترے دیوانوں کی
شام ہوتی ہے تو وحشت نہیں دیکھی جاتی

تمکنت سے تجھے رخصت تو کیا ہے لیکن
ہم سے اُن آنکھوں کی حسرت نہیں دیکھی جاتی

کون اترا ہے یہ آفاق کی پہنائی میں
آئنہ خانے کی حیرت نہیں دیکھی جاتی

چارہ سازوں کی اذیت نہیں دیکھی جاتی
تیرے بیمار کی حالت نہیں دیکھی جاتی

اپنا تبصرہ بھیجیں