Bura Bure Ke Alawa Bhala Bhi Hota Hai

غزل
برا برے کے علاوہ بھلا بھی ہوتا ہے
ہر آدمی میں کوئی دوسرا بھی ہوتا ہے
 
تم اپنے دیس کی سوغات ہو ہمارے لیے
کہ حسن تحفۂ آب و ہوا بھی ہوتا ہے
 
مقابلے پہ کمر بستہ ہم نہیں ہوتے
اگر شکست کا خطرہ ذرا بھی ہوتا ہے
 
تمہارے شہر میں ہے جی لگا ہوا ورنہ
مسافروں کے لیے راستہ بھی ہوتا ہے
 
وہ چہرہ ایک تصور بھی ہے حقیقت بھی
دریچہ بند بھی ہوتا ہے وا بھی ہوتا ہے
 
ہم اے شعورؔ اکیلے کبھی نہیں ہوتے
ہمارے ساتھ ہمارا خدا بھی ہوتا ہے
Ghazal
Bura Bure Ke Alawa Bhala Bhi Hota Hai
Har aadmi mein koi dusra bhi hota hai

Tum apne des ki saughat ho hamare liye
Ki husn tohfa-e-ab-o-hawa bhi hota hai

Muqable pe kamar-basta hum nahin hote
Agar shikast ka khatra zara bhi hota hai

Tumhaare shahr mein hai ji laga hua warna
Musafiron ke liye rasta bhi hota hai

Wo chehra ek tasawwur bhi hai haqiqat bhi
Daricha band bhi hota hai wa bhi hota hai

Hum ai ‘shuur’ akele kabhi nahin hote
Hamare sath hamara khuda bhi hota hai

اپنا تبصرہ بھیجیں