Apne Ehsas Se Chhu Kar Mujhe Sandal Kar Do

غزل
اپنے احساس سے چھو کر مجھے صندل کر دو
میں کہ صدیوں سے ادھورا ہوں مکمل کر دو

نہ تمہیں ہوش رہے اور نہ مجھے ہوش رہے
اس قدر ٹوٹ کے چاہو مجھے پاگل کر دو

تم ہتھیلی کو مرے پیار کی مہندی سے رنگو
اپنی آنکھوں میں مرے نام کا کاجل کر دو

اس کے سائے میں مرے خواب دہک اٹھیں گے
میرے چہرے پہ چمکتا ہوا آنچل کر دو

دھوپ ہی دھوپ ہوں میں ٹوٹ کے برسو مجھ پر
اس قدر برسو مری روح میں جل تھل کر دو

جیسے صحراؤں میں ہر شام ہوا چلتی ہے
اس طرح مجھ میں چلو اور مجھے جل تھل کر دو

تم چھپا لو مرا دل اوٹ میں اپنے دل کی
اور مجھے میری نگاہوں سے بھی اوجھل کر دو

مسئلہ ہوں تو نگاہیں نہ چراؤ مجھ سے
اپنی چاہت سے توجہ سے مجھے حل کر دو

اپنے غم سے کہو ہر وقت مرے ساتھ رہے
ایک احسان کرو اس کو مسلسل کر دو

مجھ پہ چھا جاؤ کسی آگ کی صورت جاناں
اور مری ذات کو سوکھا ہوا جنگل کر دو
 
Ghazal
Apne Ehsas Se Chhu Kar Mujhe Sandal Kar Do
Main ki sadiyon se adhura hun mukammal kar do

Na tumhein hosh rahe aur na mujhe hosh rahe
Is qadar tut ke chaho mujhe pagal kar do

Tum hatheli ko mere pyar ki mehndi se rango
Apni aankhon mein mere nam ka kajal kar do

Is ke sae mein mere khwab dahak utthenge
Mere chehre pe chamakta hua aanchal kar do

Dhup hi dhup hun main tut ke barso mujh par
Is qadar barso meri ruh mein jal-thal kar do

Jaise sahraon mein har sham hawa chalti hai
Is tarah mujh mein chalo aur mujhe jal-thal kar do

Tum chhupa lo mera dil ot mein apne dil ki
Aur mujhe meri nigahon se bhi ojhal kar do

Masala hun to nigahen na churao mujh se
Apni chahat se tawajjoh se mujhe hal kar do

Apne gham se kaho har waqt mere sath rahe
Ek ehsan karo is ko musalsal kar do

Mujh pe chha jao kisi aag ki surat jaanan
Aur meri zat ko sukha hua jangal kar do

اپنا تبصرہ بھیجیں