Apne Bistar Pe Bahut Der Se Main Nim-Daraaz

نظم

اپنے بستر پہ بہت دیر سے میں نیم دراز
سوچتی تھی کہ وہ اس وقت کہاں پر ہوگا
 
میں یہاں ہوں مگر اس کوچۂ رنگ و بو میں
روز کی طرح سے وہ آج بھی آیا ہوگا
 
اور جب اس نے وہاں مجھ کو نہ پایا ہوگا!؟
آپ کو علم ہے وہ آج نہیں آئی ہیں؟
 
میری ہر دوست سے اس نے یہی پوچھا ہوگا
کیوں نہیں آئی وہ کیا بات ہوئی ہے آخر
 
خود سے اس بات پہ سو بار وہ الجھا ہوگا
کل وہ آئے گی تو میں اس سے نہیں بولوں گا
 
آپ ہی آپ کئی بار وہ روٹھا ہوگا
وہ نہیں ہے تو بلندی کا سفر کتنا کٹھن
 
سیڑھیاں چڑھتے ہوئے اس نے یہ سوچا ہوگا
راہداری میں ہرے لان میں پھولوں کے قریب
 
اس نے ہر سمت مجھے آن کے ڈھونڈا ہوگا
نام بھولے سے جو میرا کہیں آیا ہوگا
 
غیر محسوس طریقے سے وہ چونکا ہوگا
ایک جملے کو کئی بار سنایا ہوگا
 
بات کرتے ہوئے سو بار وہ بھولا ہوگا
یہ جو لڑکی نئی آئی ہے کہیں وہ تو نہیں
 
اس نے ہر چہرہ یہی سوچ کے دیکھا ہوگا
جان محفل ہے مگر آج فقط میرے بغیر
 
ہائے کس درجہ وہی بزم میں تنہا ہوگا
کبھی سناٹوں سے وحشت جو ہوئی ہوگی اسے
 
اس نے بے ساختہ پھر مجھ کو پکارا ہوگا
چلتے چلتے کوئی مانوس سی آہٹ پا کر
 
دوستوں کو بھی کس عذر سے روکا ہوگا
یاد کر کے مجھے نم ہو گئی ہوں گی پلکیں
 
”آنکھ میں پڑ گیا کچھ” کہہ کے یہ ٹالا ہوگا
اور گھبرا کے کتابوں میں جو لی ہوگی پناہ
 
ہر سطر میں مرا چہرہ ابھر آیا ہوگا
جب ملی ہوگی اسے میری علالت کی خبر
 
اس نے آہستہ سے دیوار کو تھاما ہوگا
سوچ کر یہ کہ بہل جائے پریشانی دل
 
یوں ہی بے وجہ کسی شخص کو روکا ہوگا!
اتفاقاً مجھے اس شام مری دوست ملی
 
میں نے پوچھا کہ سنو آئے تھے وہ؟ کیسے تھے؟
مجھ کو پوچھا تھا مجھے ڈھونڈا تھا چاروں جانب؟
 
اس نے اک لمحے کو دیکھا مجھے اور پھر ہنس دی
اس ہنسی میں تو وہ تلخی تھی کہ اس سے آگے
 
کیا کہا اس نے مجھے یاد نہیں ہے لیکن
اتنا معلوم ہے خوابوں کا بھرم ٹوٹ گیا
 
Nazam
Apne Bistar Pe Bahut Der Se Main Nim-Daraaz
Sochti thi ki wo is waqt kahan par hoga

Main yahan hun magar us kucha-e-rang-o-bu mein
Roz ki tarah se wo aaj bhi aaya hoga

Aur jab us ne wahan mujh ko na paya hoga!?
Aap ko ilm hai wo aaj nahin aai hain?

Meri har dost se us ne yahi puchha hoga
Kyun nahin aai wo kya baat hui hai aakhir

Khud se is baat pe sau bar wo uljha hoga
Kal wo aaegi to main us se nahin bolunga

Aap hi aap kai bar wo rutha hoga
Wo nahin hai to bulandi ka safar kitna kathin

Sidhiyan chadhte hue us ne ye socha hoga
Rahdari mein hare lawn mein phulon ke qarib

Us ne har samt mujhe aan ke dhunda hoga
Nam bhule se jo mera kahin aaya hoga

Ghair-mahsus tariqe se wo chaunka hoga
Ek jumle ko kai bar sunaya hoga

Baat karte hue sau bar wo bhula hoga
Ye jo ladki nai aai hai kahin wo to nahin

Us ne har chehra yahi soch ke dekha hoga
Jaan-e-mahfil hai magar aaj faqat mere baghair

Hae kis darja wahi bazm mein tanha hoga
Kabhi sannaton se wahshat jo hui hogi use

Us ne be-sakhta phir mujh ko pukara hoga
Chalte chalte koi manus si aahat pa kar
 
Doston ko bhi kis uzr se roka hoga
Yaad kar ke mujhe nam ho gai hongi palken
 
Aankh mein pad gaya kuchh kah ke ye tala hoga
Aur ghabra ke kitabon mein jo li hogi panah

Har satar mein mera chehra ubhar aaya hoga
Jab mili hogi use meri alalat ki khabar

Us ne aahista se diwar ko thama hoga
Soch kar ye ki bahal jae pareshani-e-dil

Yunhi be-wajh kisi shakhs ko roka hoga!
Ittifaqan mujhe us sham meri dost mili

Main ne puchha ki suno aae the wo? kaise the?
Mujh ko puchha tha mujhe dhunda tha chaaron jaanib?

Us ne ek lamhe ko dekha mujhe aur phir hans di
Is hansi mein to wo talkhi thi ki is se aage

Kya kaha us ne mujhe yaad nahin hai lekin
Itna malum hai khwabon ka bharam tut gaya!

اپنا تبصرہ بھیجیں