Ajab Ghari Thi| sad urdu Poetry

Ajab Ghari Thi

Ajab Ghari Thi
Kitab kichar mein gir parri thi

Chamakte lafzon ki maili aankhon mein
Uljhay aanso bola rahe thay

Magar mujhe hoosh hi kahan tha
Nazar mein ek aur hi jahan tha

Naye naye manzaron ki khwahish mein
Apne manzar se kat gaya hoon
Naye naye dairon ki gardish mein

Apne mehwar se hatt gaya hoon
Silla jaza khauf na umeedi
Umed imkan hai yaqeeni
Hazar khaton mein bat gaya hoon

Ab es se pehle keh rat apni kamand dale
Yeh chahat hoon keh lout jaon

Ajab nahi wo kitab ab bhi wahin parri ho
Ajab nahi aaj bhi meri raah dekhti ho

Chamkte lafzon ki meli aankhon mein uljhe aanso
Ajab nahi mere lafz mujh ko maaf kardein

Hawa wo hars-o-hwas ki
Sab gird saaf karden
Ajab ghari thi
Kitab kicharr mein gir parri thi
نظم
عجب گھڑی تھی
کتاب کیچڑ میں گر پڑی تھی

چمکتے لفظوں کی میلی آنکھوں میں
الجھے آ نسو بلا رہے تھے

مگر مجھے ہوش ہی کہاں تھا
نظر میں اک اور ہی جہاں تھا

نئے نئے منظروں کی خواہش میں
اپنے منظر سے کٹ گیا ہوں
نئے نئے دائروں کی گردش میں
اپنے محور سے ہٹ گیا ہوں

صلہ جزا خوف نا اُمیدی
امید امکان ہے یقینی
ہزار خاتوں میں بٹ گیا ہوں

اب اس سے پہلے کہ رات اپنی کمند ڈالے
یہ چاہتا ہوں کہ لوٹ جاؤں

عجب نہیں وہ کتاب اب بھی وہیں پڑی ہو
عجب نہیں آج بھی مری راہ دیکھتی ہو

چمکتے لفظوں کی میلی آنکھوں میں الجھے آ نسو
عجب نہیں میرے لفط مجھ کو معاف کر دیں

ہوا وہ حرص و ہوس کی
سب گرد صاف کر دیں
عجب گھڑی تھی
کتاب کیچڑ میں گر پڑی تھی

اپنا تبصرہ بھیجیں