Agar Andar Se Bahir Aa Gaya Hoon

Agar Andar Se Bahir Aa Gaya Hoon

Agar Andar Se Bahir Aa Gaya Hoon
To kiya manzar se bahir aa gaya hoon

Kaha hai jo mujhe lalkarte thay
Mein apne ghar se bahir aa gaya hoon

Tumhare khauf se andar chhupa tha
Aur apne dar se bahir aa gaya hoon

Mein pathar mein bare aaram se tha
Teri thokar se bahir aa gaya hoon

Agar andar se bahir aa gaya hoon
To kiya manzar se bahir aa gaya hoon
غزل
اگر اندر سے باہر آ گیا ہوں
تو کیا منظر سے باہر آ گیا ہوں

کہاں ہیں جو مجھے للکارتے تھے
میں اپنے گھر سے باہر آ گیا ہوں

تمہارے خوف سے اندر چھپا تھا
اور اپنے ڈر سے باہر آگیا ہوں

میں پتھر میں بڑے آرام سے تھا
تیری ٹھوکر سے باہر آگیا ہوں

اگر اندر سے باہر آ گیا ہوں
تو کیا منظر سے باہر آ گیا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں