Aankh Mein Aansoo Hain| Ghazal Ehsan Danish

Aankh Mein Aansoo Hain| Ghazal Ehsan Danish

Aankh Mein Aansoo Hain Ehsas Mussarat Dil Mein Hai
Aik firdous nizarah aap ki mehfil mein hai

Har jafa tere munasib har sitam tera durust
Ab wohi meri tamanna hai jo tere dil mein hai

Jab bajaz mehboob ho jati hai ujhal kainaat
Ik maqam aisa bhi jazab shoq ki manzil mein hai

Fasal gul mein hai tahasha hansane walon hoshiyar
Iztiraab dil ka pehlo bhi sukoon dil mein hai

Jis ko douri se huzoori mein siwa ho iztiraab
Woh preshan mohabbat kis qadar muskil mein hai

Dohr ke hungama sheikh-o-barhaman se buland
Aur bhi hungama ik gardaab nooh dil mein hai

Ab koi shayan jawle hai nah shayan kalam
Tou usi manzil mein behtar hai keh jis manzil mein hai

Na sazaa hai us ke jalwoon ki nizakat ke liye
Woh gham hasil jo tere ishq ke hasil mein hai

Apne markaz se sitaron par jo karta hoon nazar
Jis ko jis manzil mein chorra tha usi manzil mein hai

Mom kar deti hai jo folaad aahn ka jigar
Woh bhi ik jhankaar aawaz shikast dil mein hai

Kon hai ehsan meri zindagi ka raaz dar
Kya kahon kis tarha merne ki tamanna dil mein hai

Aankh mein aansoo hain ehsas mussarat dil mein hai
Aik firdous nizarah aap ki mehfil mein hai
غزل
آ نکھ میں آ نسو ہیں احساس مسرت دل میں ہے
ایک فردوس نظارہ آپ کی محفل میں ہے

ہر جفا تیرے مناسب ہر ستم تیرا درست
اب وہی میری تمنا ہے جو تیرے دل میں ہے

جب بجز محبوب ہو جاتی ہے اوجھل کائنات
اک مقام ایسا بھی جذب شوق کی منزل میں ہے

فصل گل میں ہے تحاشا ہنسنے والو ہوشیار
اضطراب دل کا پہلو بھی سکون دل میں ہے

جس کو دوری سے حضوری میں سوا ہو اضطراب
وہ پریشان محبت کس قدر مشکل میں ہے

دہر کے ہنگامہ شیخ و برہمن سے بلند
اور بھی ہنگامہ اک گرداب نوح دل میں ہے

اب کوئی شایان جلوے ہے نہ شایان کلام
تو اسی منزل میں بہتر ہے کہ جس منزل میں ہے

ناسزا ہے اس کے جلووں کی نزاکت کےلئے
وہ غم حاصل جو تیرے عشق کے حاصل میں ہے

اپنے مرکز سے ستاروں پر جو کرتا ہوں نظر
جس کو جس منزل میں چھوڑا تھا اسی منزل میں ہے

موم کر دیتی ہے جو فولاد آہن کا جگر
وہ بھی اک جھنکار آواز شکست دل میں ہے

کون ہے احسان میری زندگی کا راز دار
کیا کہوں کس طرح مرنے کی تمنا دل میں ہے

آنکھ میں آنسو ہیں احساس مسرت دل میں ہے
ایک فردوس نظارہ آپ کی محفل میں ہے
Read more click here

اپنا تبصرہ بھیجیں