Aaj Ki Shab To Kisi Taur Guzar Jaegi

نظم
آج کی شب تو کسی طور گزر جائے گی
رات گہری ہے مگر چاند چمکتا ہے ابھی
 
میرے ماتھے پہ ترا پیار دمکتا ہے ابھی
میری سانسوں میں ترا لمس مہکتا ہے ابھی
 
میرے سینے میں ترا نام دھڑکتا ہے ابھی
زیست کرنے کو مرے پاس بہت کچھ ہے ابھی
 
تیری آواز کا جادو ہے ابھی میرے لیے
تیرے ملبوس کی خوشبو ہے ابھی میرے لیے
 
تیری بانہیں ترا پہلو ہے ابھی میرے لیے
سب سے بڑھ کر مری جاں تو ہے ابھی میرے لیے
 
زیست کرنے کو مرے پاس بہت کچھ ہے ابھی
آج کی شب تو کسی طور گزر جائے گی!
 
آج کے بعد مگر رنگ وفا کیا ہوگا
عشق حیراں ہے سر شہر صبا کیا ہوگا
 
میرے قاتل ترا انداز جفا کیا ہوگا!
آج کی شب تو بہت کچھ ہے مگر کل کے لیے
 
ایک اندیشۂ بے نام ہے اور کچھ بھی نہیں
دیکھنا یہ ہے کہ کل تجھ سے ملاقات کے بعد
 
رنگ امید کھلے گا کہ بکھر جائے گا
وقت پرواز کرے گا کہ ٹھہر جائے گا
 
جیت ہو جائے گی یا کھیل بگڑ جائے گا
خواب کا شہر رہے گا کہ اجڑ جائے گا

 

Nazam

Aaj Ki Shab To Kisi Taur Guzar Jaegi
Raat gahri hai magar chand chamakta hai abhi
 
Mere mathe pe tera pyar damakta hai abhi
Meri sanson mein tera lams mahakta hai abhi
 
Mere sine mein tera nam dhadakta hai abhi
Zist karne ko mere pas bahut kuchh hai abhi
 
Teri aawaz ka jadu hai abhi mere liye
Tere malbus ki khushbu hai abhi mere liye
 
Teri banhen tera pahlu hai abhi mere liye
Sab se badh kar meri jaan tu hai abhi mere liye
 
Zist karne ko mere pas bahut kuchh hai abhi
Aaj ki shab to kisi taur guzar jaegi!
 
Aaj ke baad magar rang-e-wafa kya hoga
Ishq hairan hai sar-e-shahr-e-saba kya hoga
 
Mere qatil tera andaz-e-jafa kya hoga!
Aaj ki shab to bahut kuchh hai magar kal ke liye
 
Ek andesha-e-be-nam hai aur kuchh bhi nahin
Dekhna ye hai ki kal tujh se mulaqat ke baad
 
Rang-e-ummid khilega ki bikhar jaega
Waqt parwaz karega ki thahar jaega
 
Jit ho jaegi ya khel bigad jaega
Khwab ka shahr rahega ki ujad jaega

اپنا تبصرہ بھیجیں