Yeh Takleef Rahe Gi Khasta Halon Ko

Yeh Takleef Rahe Gi Khasta Halon Ko

Yeh Takleef Rahe Gi Khasta Halon Ko
Tou ne ja chamkaya hai jin kalon ko

Paon pakar kar log girana chahtay hain
Zehen chala kr agay barne walo ko

Ulti chaal ka asra lena parta hai
Seedhi samjh nahi ati saalon ko

Baithay baithay yun hi kisi ka zikar chala
Chaltay chaltay bhool gay sab chalon ko

Rabt zarori hota hai sharminda hoon
Anay walay zang laga hai taloon ko

Koi yun ja ke pochay hussan ki paryoun se
Kia milta hai rol ke bholay bhalon ko

Rakh walon ke khawab mein lashain bolain gi
Neend nahi karni hoti rakh walon ko

Yeh takleef rahe gi khasta halon ko
Tu ne ja chamkaya hai jin kalon ko
غزل
یہ تکلیف رہے گی خستہ حالوں کو
تو نے جا چمکایا ہے جن کالوں کو

پاؤں پکڑ کر لوگ گرانا چاہتے ہیں
زہن چلا کر آگے بڑھنے والوں کو

اُلٹی چال کا آسرا لینا پڑتا ہے
سیدھی سمجھ نہیں آتی سالوں کو

بیٹھے بیٹھے یوں ہی کسی کا زکر چلا
چلتے چلتے بھول گئے سب چھالوں کو

ربط ضروری ہوتا ہے شرمندہ ہوں
آنے والوں زنگ لگا ہت تالوں کو

کوئی تو جاکے پوچھے حسن کی پریوں سے
کیا ملتا ہے رول کے بھولے بھالوں کو

رکھ والوں کے خواب میں لاشیں بولیں گی
نیند نہیں کرنی ہوتی رکھ والوں کو

یہ تکلیف رہے گی خستہ حالوں کو
تو نے جا چمکایا ہے جن کالوں کو

اپنا تبصرہ بھیجیں