Yeh Nah Kahiye Keh Hawa Shahr Ki Sahrai Hai

Yeh Nah Kahiye Keh Hawa Shahr Ki Sahrai Hai

Yeh Nah Kahiye Keh Hawa Shahr Ki Sahrai Hai
Ghar ki deewar hi boseedah nikal aai hai

Marham waqt se kuch kaam nahi ho paya
Ab tere hath mere zakhm ki tur pai hai

Mein andheron se issi zeam mein lar parti hoon
Kuch chiraghon se meri achi shanasai hai

Wehshat dil mein abhi itni shikasta bhi nahi
Kyun mujhe khainch ke darya ki taraf lai hai

Sabar ke ghoont bohat tarsh sahi pi lijiye
Cheekh uthnay mein jo andesha e ruswai hai

Ab mohabbat ki kahani ne kashish khoo di hai
ab nah woh ronaq-e-dil hai nah woh ranai hai

Yeh nah kahiye keh hawa shahr ki sahrai hai
Ghar ki deewar hi boseedah nikal aai hai
غزل
یہ نہ کہئیے کہ ہوا شہر کی صحرائی ہے
گھر کی دیوار ہی بوسیدہ نکل آئی ہے

مرہمِ وقت سے کچھ کام نہیں ہو پایا
اب ترے ہاتھ مرے زخم کی تُرپائی ہے

میں اندھیروں سے اِسی زعم میں لڑ پڑتی ہوں
کچھ چراغوں سے مری اچھی شناسائی ہے

وحشتِ دل میں ابھی اِتنی شکستہ بھی نہیں
کیوں مجھے کھینچ کے دریا کی طرف لائی ہے

صبر کے گھونٹ بہت ترش سہی پی لیجئے
چیخ اٹھنے میں جو اندیشہ ء رسوائی ہے

اب محبت کی کہانی نے کشش کھو دی ہے
اب نہ وہ رونقِ دل ہے نہ وہ رعنائی ہے

یہ نہ کہئیے کہ ہوا شہر کی صحرائی ہے
گھر کی دیوار ہی بوسیدہ نکل آئی ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں