Yeh Kya Rut Hai Ab Ki Rut Mein Dekhen Zard Gulab

Yeh Kya Rut Hai Ab Ki Rut Mein Dekhen Zard Gulab

Yeh Kya Rut Hai Ab Ki Rut Mein Dekhen Zard Gulab
Chehre sookhe phool khazan ke aankhen zard gulab

Phool se bache bhi khwabon ki eendhan bante jayen
Dekhen kaisi rut phoolon ki aurrhen zard gulab

Aik alamat hogayi apne khwabon ki tafseer
Sochen apne khwabon ko tu likhen zard gulab

Deewaron par apni nasal ka noha likhte jayen
Jis ki din bhi zehreele hain raatein zard gulab

Jhoot ke zehreele panjun mein jakare murda log
Baatein urrti khushbu jaisi sochen zard gulab

Ab aangan mein sannate ki dain nachay gay
Ab bachon ke badle ghar mein khailen zard gulab

Aane walay shayad apne dukh ko samjhenge
Danish yar kitabon mein hum rakhen zard gulab

Yeh kya rut hai ab ki rut mein dekhen zard gulab
Chehre sookhe phool khazan ke aankhen zard gulab
غزل
یہ کیا رت ہے اب کی رت میں دیکھیں زرد گلاب
چہرے سوکھے پھول خزاں کے آنکھیں زرد گلاب

پھول سے بچے بھی خوابوں کے ایندھن بنتے جائیں
دیکھیں کیسی رت پھولوں کی اوڑھیں زرد گلاب

ایک علامت ہو گئی اپنے خوابوں کی تفسیر
سوچیں اپنے خوابوں کو تو لکھیں زرد گلاب

دیواروں پر اپنی نسل کا نوحہ لکھتے جائیں
جس کے دن بھی زہریلے ہیں راتیں زرد گلاب

جھوٹ کے زہریلے پنجوں میں جکڑے مردہ لوگ
باتیں اُڑتی خوشبو جیسی سوچیں زرد گلاب

اب آنگن میں سناٹے کی ڈائن ناچے گائے
اب بچوں کے بدلے گھر میں کھیلیں زرد گلاب

آنے والے شاید اپنے دکھ کو سمجھیں گے
دانش یار کتابوں میں ہم رکھیں زرد گلاب

یہ کیا رت ہے اب کی رت میں دیکھیں زرد گلاب
چہرے سوکھے پھول خزاں کے آنکھیں زرد گلاب

اپنا تبصرہ بھیجیں