Ye Kaisa Nasha Hai Main Is Jab Khumar Mein Hun

یہ کیسا نشہ ہے میں کس عجب خمار میں ہوں
تو آ کے جا بھی چکا ہے میں انتظار میں ہوں
مکاں ہے قبر جسے لوگ خود بناتے ہیں
میں اپنے گھر میں ہوں یا میں کسی مزار میں ہوں
در فصیل کھلا یا پہاڑ سر سے ہٹا
میں اب گری ہوئی گلیوں کے مرگ زار میں ہوں
بس اتنا ہوش ہے مجھ کو کہ اجنبی ہیں سب
رکا ہوا ہوں سفر میں کسی دیار میں ہوں
میں ہوں بھی اور نہیں بھی عجیب بات ہے یہ
یہ کیسا جبر ہے میں جس کے اختیار میں ہوں
منیرؔ دیکھ شجر چاند اور دیواریں
ہوا خزاں کی ہے سر پر شب بہار میں ہوں
Ye Kaisa Nasha Hai Main Is Jab Khumar Mein Hun
tu aa ke ja bhi chuka hai main intizar mein hun
 
makan hai qabr jise log khud banate hain
main apne ghar mein hun ya main kisi mazar mein hun
 
dar-e-fasil khula ya pahad sar se hata
main ab giri hui galiyon ke marg-zar mein hun
 
bas itna hosh hai mujh ko ki ajnabi hain sab
ruka hua hun safar mein kisi dayar mein hun
 
main hun bhi aur nahin bhi ajib baat hai ye
ye kaisa jabr hai main jis ke ikhtiyar mein hun
 
‘munir’ dekh shajar chand aur diwaren
hawa khizan ki hai sar par shab-e-bahaar mein hun

خرد کے پاس خبر کے سوا کچھ اور نہیں
ترا علاج نظر کے سوا کچھ اور نہیں

ہر اک مقام سے آگے مقام ہے تیرا
حیات ذوق سفر کے سوا کچھ اور نہیں

گراں بہا ہے تو حفظ خودی سے ہے ورنہ
گہر میں آب گہر کے سوا کچھ اور نہیں

رگوں میں گردش خوں ہے اگر تو کیا حاصل
حیات سوز جگر کے سوا کچھ اور نہیں

عروس لالہ مناسب نہیں ہے مجھ سے حجاب
کہ میں نسیم سحر کے سوا کچھ اور نہیں

جسے کساد سمجھتے ہیں تاجران فرنگ
وہ شے متاع ہنر کے سوا کچھ اور نہیں

بڑا کریم ہے اقبال بے نوا لیکن
عطائے شعلہ شرر کے سوا کچھ اور نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں