Thora Likha Aur Zyada Chhor Diya

Thora Likha Aur Zyada Chhor Diya

Thora Likha Aur Zyada Chhor Diya
Aane walon ke liye rasta chhor diya

Larkiyan ishq mein kitni pagal hoti hain
Phone baja aur chulha jalta chhor diya

Bas kano par hath rakhe thay thori dair
Aur phir uss aawaz ne pichha chhor diya

Roz aik pataa mujh mein aakar girta hai
Jab se mein ne bagh mein jana chhor diya

Tum kiya jano iss darya par kiya guzri
Tum ne bas pani bharna chhor diya

Thora likha aur zyada chhor diya
Aane walon ke liye rasta chhor diya
غزل
تھوڑا لکھا اور زیادہ چھوڑ دیا
آنے والوں کے لیے رستہ چھوڑ دیا

لڑکیاں عشق میں کتنی پاگل ہوتی ہیں
فون بجا اور چولہا جلتا چھوڑ دیا

بس کانوں پر ہاتھ رکھے تھے تھوڑی دیر
اور پھر اس آواز نے پیچھا چھوڑ دیا

روز ایک پتا مجھ میں آکر گرتا ہے
جب سے میں نے باغ میں جانا چھوڑ دیا

تم کیا جانو اس دریا پر کیا گزری
تم نے بس پانی بھرنا چھوڑ دیا

تھوڑا لکھا اور زیادہ چھوڑ دیا
آنے والوں کے لیے رستہ چھوڑ دیا

اپنا تبصرہ بھیجیں