Rasta Bhi Kathin Dhoop Mein Shiddat Bhi Bohat Thi

Rasta Bhi Kathin Dhoop Mein Shiddat Bhi Bohat Thi

Rasta Bhi Kathin Dhoop Mein Shiddat Bhi Bohat Thi
Saye se magar uss ko mohabbat bhi bohat thi

Khaimay nah koi mere musafir ke jalaye
Zakhmi tha bohat paon musafit bhi bohat thi

Sab dost mere muntazir parda shab thay
Din mein to safar karne mein dikkat bhi bohat thi

Barish ki duaon mein nami aakhn ki mil jaye
Jazbay ki kabhi itni rafaqat bhi bohat thi

Kuchh to tere mausam hi mujhe raas kam aaye
Aur kuchh meri miti mein baghawat bhi bohat thi

Phoolon ka bikharna to muqaddar hi tha lekin
Kuchh uss mein hawaon ki siyasat bhi bohat thi

Woh bhi sar-e-maqtal hai keh such jis ka tha shahid
Aur waqif ahwal adalat bhi bohat thi

Uss turk-e-rafaqat peh parishan to hoon lekin
Ab tak ke tere saath peh hairat bhi bohat thi

Khush aye tujhe shahr munafiq ki ameeri
Hum logon ko such kehne ki adat bhi bohat thi

Rasta bhi kathin dhoop mein shiddat bhi bohat thi
Saye se magar uss ko mohabbat bhi bohat thi
غزل
رستہ بھی کٹھن دھوپ میں شدت بھی بہت تھی
سائے سے مگر اُس کو محبت بھی بہت تھی

خیمے نہ کوئی میرے مسافر کے جلائے
زخمی تھا بہت پاؤں مسافت بھی بہت تھی

سب دوست مرے منتظر پردہ شب تھے
دن میں تو سفر کرنے میں دقت بھی بہت تھی

بارش کی دعاؤں میں نمی آنکھ کی مل جائے
جذبے کی کبھی اتنی رفاقت بھی بہت تھی

کچھ تو ترے موسم ہی مجھے راس کم آئے
اور کچھ مری مٹی میں بغاوت بھی بہت تھی

پھولوں کا بکھرنا تو مقدر ہی تھا لیکن
کچھ اس میں ہواؤں کی سیاست بھی بہت تھی

وہ بھی سر مقتل ہے کہ سچ جس کا تھا شاہد
اور واقف احوال عدالت بھی بہت تھی

اس ترک رفاقت پہ پریشاں تو ہوں لیکن
اب تک کے ترے ساتھ پہ حیرت بھی بہت تھی

خوش آئے تجھے شہر منافق کی امیری
ہم لوگوں کو سچ کہنے کی عادت بھی بہت تھی

رستہ بھی کٹھن دھوپ میں شدت بھی بہت تھی
سائے سے مگر اُس کو محبت بھی بہت تھی

اپنا تبصرہ بھیجیں