Raazi Hun Tujhko Hal Sunaye Begair Bhi

Raazi Hun Tujhko Hal Sunaye Begair Bhi

Ghazal
Raazi Hun Tujhko Haal Sunaye Begair Bhi
Tu janta hai mere bataye begair bhi

Galib se ikhtilaf nahi hai magar yeh aag
Mujhko tou lag gai hai lagaye begair bhi

Har do tarha se theek hai dil ka mamla
Dekhe begair bhi dekhaye begair bhi

Phir mein usay khuda na kahoon tou kia kahoon
Jo samne ho samne aye begair bhi

Tu kar nahi saka yeh alag baat hai warna dost
Banta hai naqsh , naqsh banaye begair bhi

Raazi hun tujhko haal sunaye begair bhi
Tu janta hai mere bataye begair bhi
غزل
راضی ہوں تجھکو حال سنائے بغیر بھی
تو جانتا ہے میرے بتائے بغیر بھی

غالب سے اختلاف نہیں ہے مگر یہ آگ
مجھکو تو لگ گئی ہے لگائے بغیر بھی

ہر دو طرح سے ٹھیک ہے دل کا معاملہ
دیکھے بغیر بھی ہے دیکھائے بغیر بھی

پھر میں اُسے خدا نہ کہوں تو اور کہوں
جو سامنے ہو سامنے آئے بغیر بھی

تو کر نہیں سکا یہ الگ بات ورنہ دوست
بنتا ہے نقش، نقش بنائے بغیر بھی

راضی ہوں تجھکو حال سنائے بغیر بھی
تو جانتا ہے میرے بتائے بغیر بھی

اپنا تبصرہ بھیجیں