Qaid Mein Guzregi Jo Umr Bade Kaam Ki Thi

غزل
قید میں گزرے گی جو عمر بڑے کام کی تھی
پر میں کیا کرتی کہ زنجیر ترے نام کی تھی

جس کے ماتھے پہ مرے بخت کا تارہ چمکا
چاند کے ڈوبنے کی بات اسی شام کی تھی

میں نے ہاتھوں کو ہی پتوار بنایا ورنہ
ایک ٹوٹی ہوئی کشتی مرے کس کام کی تھی

وہ کہانی کہ ابھی سوئیاں نکلیں بھی نہ تھیں
فکر ہر شخص کو شہزادی کے انجام کی تھی

یہ ہوا کیسے اڑا لے گئی آنچل میرا
یوں ستانے کی تو عادت مرے گھنشیام کی تھی

بوجھ اٹھاتے ہوئے پھرتی ہے ہمارا اب تک
اے زمیں ماں تری یہ عمر تو آرام کی تھی
Ghazal
Qaid Mein Guzregi Jo Umr Bade Kaam Ki Thi
Par main kya karti ki zanjir tere nam ki thi

Jis ke mathe pe mere bakht ka tara chamka
Chand ke dubne ki baat usi sham ki thi

Main ne hathon ko hi patwar banaya warna
Ek tuti hui kashti mere kis kaam ki thi

Wo kahani ki abhi suiyan niklin bhi na thin
Fikr har shakhs ko shahzadi ke anjam ki thi

Ye hawa kaise uda le gai aanchal mera
Yun satane ki to aadat mere ghanshyam ki thi

Bojh uthate hue phirti hai hamara ab tak
Ai zamin-man teri ye umr to aaram ki thi

اپنا تبصرہ بھیجیں