Mohabbat Ab Nahin Hogi

نظم:محبت اب نہی ہو گی
ستارے جو دمکتے ہیں
کسی کی چشم حیراں میں
ملاقاتیں جو ہوتی ہیں
جمال ابر و باراں میں
یہ نا‌‌ آباد وقتوں میں
دل ناشاد میں ہوگی
محبت اب نہیں ہوگی
یہ کچھ دن بعد میں ہوگی
گزر جائیں گے جب یہ دن
یہ ان کی یاد میں ہوگی
Nazam:Mohabat Ab Nahi Hogi
sitare jo damakte hain
kisi ki chashm-e-hairan mein
 
mulaqaten jo hoti hain
jamal-e-abr-o-baran mein
 
ye na-abaad waqton mein
dil-e-nashad mein hogi
 
mohabbat ab nahin hogi
ye kuchh din baad mein hogi
 
guzar jaenge jab ye din
ye un ki yaad mein hogi

اپنا تبصرہ بھیجیں