Milay Hain Ap Tu Kiya Hai Agr Khuda Na Mila

نظم
ملے ہیں آپ تو کیا ہے اگر خدا نہ ملا
ہم اہل دل کو برابر ہے سب ملا نہ ملا
بہت ملی ہمیں صحبت آداس لوگوں کی
ملے نہ میر مگر میر کا زمانہ ملا
کہاں سمجھتے ہیں یہ لوگ نا مرادی کو
جسے بھی پوچھتے ہیں کہتا ہے کچھ صلہ نہ ملا
آداس ہیں تو ہمارا کوئی قصور نہیں
ہمیں ادھر سے دل خوش معاملہ نہ ملا
جنوں گزیدوں نے یاں لمبی عمر پائی
یہ اور بات انہیں پل سکون کا نہ ملا
ہمیں تومهلت یک خواب بھی میسر نئیں
ہم اہل عشق تو کتنا غلط زمانہ ملا
لگاتے آگ مگر کم تھی گرمی رفتار
کھلاتے پھول مگر ہم کو آبلا نہ ملا
ہم اس کے دل میں سکونت کے خواب دیکھتے ہیں
کہ جس کے گھر میں پرندوں کو آشیانہ نہ ملا
Nazam
Milay Hain Ap Tu Kiya Hai Agr Khuda Na Mila
Hm aahil dil ko barbar hai sab mila na mila
Bahut mile hame sohbat uddass logo k
Milay na meer mgr meer ka zamana mila
Kahaan samjhty hain yeh log na moradi ko
Jise bhi pochty hain kehta hai koch silha na mila
Udaas hain tu hamara koi kasoor nahi
Hame udhar se dil khush mamla na mila
Janoo gazido ny yaan lambe umar pai
Yeh aur baat inhain pal sakoon ka na mila
Hame tu mholat yak khwab bhi miysar nai
Ham aahil ishq tu kitna galat zamana mila
Lagaty aag mgr km thi garmi raftar
Khelatay phool mgr ham ko aabla na mila
Ham is ky dil main sakonnet ky khwab dekhty hain
Khe jis ky ghar main prindo ko aasheana na mila

اپنا تبصرہ بھیجیں