Main Bhul Jaun Tumhein Ab

میں بھول جاؤں تمہیں 

اب یہی مناسب ہے 

مگر بھلانا بھی چاہوں تو کس طرح بھولوں 

کہ تم تو پھر بھی حقیقت وہ 

کوئی خواب نہیں 

یہاں تو دل کا یہ عالم ہے کیا کہوں 

کمبخت! 

بھلا نہ پایا وہ سلسلہ 

جو تھا ہی نہیں 

وہ اک خیال 

جو آواز تک گیا ہی نہیں 

وہ ایک بات 

جو میں کہہ نہیں سکا تم سے 

وہ ایک ربط 

جو ہم میں کبھی رہا ہی نہیں 

مجھے ہے یاد وہ سب 

جو کبھی ہوا ہی نہیں

Main bhul jaun tumhein 

ab yahi munasib hai 

magar bhulana bhi chahun to kis tarah bhulun 

ki tum to phir bhi haqiqat wo 

koi khwab nahin 

yahan to dil ka ye aalam hai kya kahun 

kam-bakht! 

bhula na paya wo silsila 

jo tha hi nahin 

wo ek khayal 

jo aawaz tak gaya hi nahin 

wo ek baat 

jo main kah nahin saka tum se 

wo ek rabt 

jo hum mein kabhi raha hi nahin 

mujhe hai yaad wo sab 

jo kabhi hua hi nahin 

اپنا تبصرہ بھیجیں