Jala Diya Shajar Jaan Keh Sabaz Bakht Nah Tha

Jala Diya Shajar Jaan Keh Sabaz Bakht Nah Tha

Jala Diya Shajar Jaan Keh Sabaz Bakht Nah Tha
Kisi bhi rat mein haara ho yeh woh darakht nah tha

Woh khwab dekha tha shahzadiyon ne pichhle paher
Phir uss ke baad muqaddar mein taj-o-takht nah tha

Zara se jabar se mein bhi to toot sakti thi
Meri tarah se tabiyaat ka ho bhi sakht nah tha

Mere liye to woh khanjar bhi phool ban ke utha
Zuban sakht thi lejha kabhi karakht na tha

Andheri raatun ke tanha musafiron ke liye
Diya jalata howa koi saaz-o-rakht nah tha

Gaye woh din keh mujhe tak tha mera dukh mehdood
Khabar ke jaisa yeh afsaana lakht lakht nah tha

Jala diya shajar jaan keh sabaz bakht nah tha
Kisi bhi rat mein haara ho yeh woh darakht nah tha
غزل
جلا دیا شجر جاں کہ سبز بخت نہ تھا
کسی بھی رت میں ہرا ہو یہ وہ درخت نہ تھا

وہ خواب دیکھا تھا شہزادیوں نے پچھلے پہر
پھر اس کے بعد مقدر میں تاج و تخت نہ تھا

ذرا سے جبر سے میں بھی تو ٹوٹ سکتی تھی
مری طرح سے طبیعت کا وہ بھی سخت نہ تھا

مرے لیے تو وہ خنجر بھی پھول بن کے اُٹھا
زبان سخت تھی لہجہ کبھی کرخت نہ تھا

اندھیری راتوں کے تنہا مسافروں کے لیے
دیا جلاتا ہوا کوئی ساز و رخت نہ تھا

گئے وہ دن کہ مجھ تک تھا میرا دکھ محدود
خبر کے جیسا یہ افسانہ لخت لخت نہ تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں