Hum nay hi lotany ka irada nahi kiya

غزل
ہم نے ہی لوٹنے کااِرادہ نہیں کیا
اُس نے بھی بھول جانے کا وعدہ نہیں کیا

دکھ اُوڑھتے نہیں بزم طرب میں ہم
ملبوس دل کو تن کا لبادہ نہیں کیا

جو غم ملا ہے بوجھ اُٹھایا ہے اُس کا خود
سر زیر بارِ ساغر بادہ ںہیں کیا

کارے جہاں ہمیں بھی بہت تھے سفر کی شام
اُس نے بھی اِلتفات زیادہ نہیں کیا

آمد پے تیری عطر و چراغ و سبو نہ ہوں
اتنا بھی بود و باش کو سادہ نہیں کیا
Ghazal
Hum nay hi lotany ka irada nahi kiya
Us nay bhi bhool janay ka wada nahi kiya

Dukh orhtay nahi bazm-e-trab main hum
Mulboss-e-dil ko tan ka libada nahi kiya

Jo ghum mila hai bojh uthaya hai us ka khud
Sar zer bar-e-saghr-o-bada nahi kiay

Kaar-e-jahan hamay bhi boht thay safar ki shaam
Us ny bhi iltafat zeyada nahi kiya

Amad py teri etar-o-charag-o-subo na hun
Itna bhi bood-o-bash ko sada nahi kiya

اپنا تبصرہ بھیجیں