Hamesha Hota Hai Izzat Aur Ehtram Se Kaam

Hamesha Hota Hai Izzat Aur Ehtram Se Kaam

Hamesha Hota Hai Izzat Aur Ehtram Se Kaam
Jahan bhi joan chalata hoon uss ke naam se kaam

Mujh aisa sust thakan ka shikar kaisay nah ho
Para howa hai tujh aisay subk kharam se kaam

Hum ahl-e-girya sitaray chiragh khauf sukoot
Shuru karte hain sab aik saath sham se kaam

Jabhi tu seekhi riazat se khamshi ki zubaan
Kisi ke samnay chalta nah tha kalam se kaam

Yeh naam mansab-o-daulat tumhein mubarak ho
Mein kab ka chor chukka hoon yeh saray aam se kaam

Phir ahl aqal junoon par sawal uthanay lagay
Wagarna rakhte thay hum log apne kaam se kaam

Woh shah jis ka nahi koi kaam sohal usay
Khuda-na-khwasta par jaye mujh Ghulam se kaam

Yeh hai junoon ka daftar qataar mein lag jayen
Yahan nah hoga sifarish se aur daam se kaam

Mein karobaari gharanay ka fard hon najmi
So bhaanp leta hoon tarz dua salam se kaam

Hamesha hota hai izzat aur ehtram se kaam
Jahan bhi joan chalata hoon uss ke naam se kaam
غزل
ہمیشہ ہوتا ہے، عزت اور احترام سے کام
جہاں بھی جاؤں ، چلاتا ہوں اُس کے نام سے کام

مجھ ایسا سست ، تھکن کا شکار کیسے نہ ہو
پڑا ہوا ہے تجھ ایسے سبک خرام سے کام

ہم اہلِ گریہ، ستارے ، چراغ، خوف، سکوت
شروع کرتے ہیں سب ایک ساتھ ، شام سے کام

جبھی تو سیکھی ، ریاضت سے خامشی کی زباں
کسی کے سامنے چلتا نہ تھا کلام سےکا

یہ نام منصب و دولت تمہیں مبارک ہو
میں کب کا چھوڑ چکا ہوں یہ سارے عام سے کام

پھر اہل، عقل ، جنوں پر سوال اُٹھانے لگے
وگرنہ رکھتے تھے ہم لوگ اپنے کام سے کام

وہ شاہ جس کا نہیں کوئی کام سہل ، اُسے
خدانخواستہ پڑ جائے مجھ غلام سے کام

یہ ہے جنون کا دفتر قطار میں لگ جائیں
یہاں نہ ہوگا سفارش سے اور دام سے کام

میں کاروباری گھرانےکا فرد ہوں نجمی
سو بھانپ لیتا ہوں طرزِ دعا سلام سے کام

ہمیشہ ہوتا ہے، عزت اور احترام سے کام
جہاں بھی جاؤں ، چلاتا ہوں اُس کے نام سے کام
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں