Hain Rawan Es Rah Per Jis Ki Koi Manzil Na Ho

Hain Rawan Es Rah Per Jis Ki Koi Manzil Na Ho

Hain Rawan Es Rah Per Jis Ki Koi Manzil Na Ho
Justajoo kertay hain uski jo hamein hasil na ho

Dasht najd-e-yaas mein dewangi ho har tarf
Har tarf mehmal ka shak ho per kahain mehmal na ho

Wahim pe tujh ko ajab hia aye jamal kam noma
Jaise sab kuch ho magar tou diid ke qabil na ho

Wo khara hai aik baab-e-iml ki dehliz per
Mein yeh kehta hoon usay es khoof mein dakhil na ho

Chahta hoon mein muneer es umer ke anjam per
Aik aisi zindagi jo es tarha mushkil na ho

Hain rawan es rah per jis ki koi manzil na ho
Justajoo kertay hain uski jo hamein hasil na ho
غزل
ہیں رواں اس راہ پر جس کی کوئی منزل نہ ہو
جستجو کرتے ہیں اُس کی جو ہمیں حاصل نہ ہو

دشت نجدِ یاس میں دیوانگی ہو ہر طرف
ہر طرف محمل کا شک ہو پر کہیں محمل نہ ہو

وہم یہ تجھ کو عجب ہے اے جمال کم نما
جیسے سب کچھ ہو مگر تو دید کے قابل نہ ہو

وہ کھڑا ہے ایک باب علم کی دہلیز پر
میں یہ کہتا ہوں اسے اس خوف میں داخل نہ ہو

چاہتا ہوں میں منیرؔ اس عمر کے انجام پر
ایک ایسی زندگی جو اس طرح مشکل نہ ہو

ہیں رواں اس راہ پر جس کی کوئی منزل نہ ہو
جستجو کرتے ہیں اس کی جو ہمیں حاصل نہ ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں