Ghaneyri Shakhon Ki Tairgi Mein Kali

Ghaneyri Shakhon Ki Tairgi Mein Kali

Ghaneyri Shakhon Ki Tairgi Mein Kali Koi Muskura Rahi Hai
Kisi ke khamosh ghar mein fitrat chiragh naghma jala rahi hai

Rukh haseen par bureda gaisu ada se karwat badal rahe hain
Jamaahi leti hoi kali par siyah bhanware machal rahe hain

Wafa hai bedaar roh shadaan, nazar mein shukhi machal rahi hai
Sehar ke daamn mein sabz tehni safaid konpal ugal rahi hai

Dharay hain seenay pe hath donon yeh hifz-e-efat ka josh dekho
Yeh jaan dekho, ye umar dekho, ye aqaal dekho,ye josh dekho

Ghaneyri shakhon ki tairgi mein kali koi muskura rahi hai
Kisi ke khamosh ghar mein fitrat chiragh naghma jala rahi hai
غزل
گھنیری شاخوں کی تیرگی میں کلی کوئی مسکرا رہی ہے
کسی کے خاموش گھر میں فطرت چراغ نغمہ جلا رہی ہے

رُخ حسیں پر بریدہ گیسو ادا سے کروٹ بدل رہے ہیں
جماہی لیتی ہوئی کلی پر سیاہ بھنورے مچل رہے ہیں

وفا ہے بیدار روح شاداں، نظر میں شوخی مچل رہی ہے
سحر کے دامں میں سبز ٹہنی سفید کونپل اگل رہی ہے

دھرے ہیں سینے پہ ہاتھ دونوں یہ حفظ عفت کا جوش دیکھو
یہ جان دیکھو، یہ عمر دیکھو، یہ عقل دیکھو، یہ جوش دیکھو

گھنیری شاخوں کی تیرگی میں کلی کوئی مسکرا رہی ہے
کسی کے خاموش گھر میں فطرت چراغ نغمہ جلا رہی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں