Es Semat Mujh Ko Yaar Nay Jane Nahi Diya

Es Semat Mujh Ko Yaar Nay Jane Nahi Diya

Es Semat Mujh Ko Yaar Nay Jane Nahi Diya
Ek aur sheher-e-yaar mein anay nahi diya

Kuch waqt chahtay thay keh sochain
Tou ne wo waqt ham ko zamane nahi diya

Manzil hai es mehk ki kahan kis chaman mein hai
Es ka pta safar mein hova nay nahi diya

Roka ana nay kawish be sood se mujhe
Es bot ko apna haal sanane nahi diya

Hai jis ke bad ehd zawal ashana munir
Itna kamal ham ko khuda nay nahi diya

Es semat mujh ko yaar nay jane nahi diya
Ek aur sheher yaar mein anay nahi diya
غزل
اس سمت مجھ کو یار نے جانے نہیں دیا
اک اور شہرِ یار میں آنے نہیں دیا

کچھ وقت چاہتے تھے کہ سوچیں ترے لیے
تو نے وہ وقت ہم کو زمانے نہیں دیا

منزل ہے اس مہک کی کہاں کس چمن میں ہے
اس کا پتہ سفر میں ہوا نے نہیں دیا

روکا انا نے کاوش بے سود سے مجھے
اس بت کو اپنا حال سنانے نہیں دیا

ہے جس کے بعد عہد زوال آشنا منیرؔ
اتنا کمال ہم کو خدا نے نہیں دیا

اپنا تبصرہ بھیجیں