Ek Hijrat Ki Awazon Ka

اک ہجرت کی آوازوں کا
کوئی بین سنے دروازوں کا
زکریا پیڑوں کی مت سن
یہ جنگل ہے خمیازوں کا
ترے سر میں سوز نہیں پیارے
تو اہل نہیں مرے سازوں کا
اوروں کو صلاحیں دیتا ہے
کوئی ڈسا ہوا اندازوں کا
مرا نخرہ کرنا بنتا ہے
میں غازی ہوں ترے غازوں کا
اک ریڑھی والا منکر ہے
تری توپوں اور جہازوں کا
Ek hijrat ki awazon ka
Koi baain sune darwazon ka

Zikria pedhon ki msti sun
Yeh jungle hai khmiazon ka

Tere sur mein soz nahi pyare
Tu ehl nahi mere sazon ka

Auron ko slahen deta hai
Koi dasa hua andazon ka

Mera nakhra karna bnta hai
Main ghazi hun tere ghazon ka

Ek redhi wala monkir hai
Teri topon aur jahazon ka

اپنا تبصرہ بھیجیں