Dil Kharab Ke Ahkam Theek Lagne Lagay

Dil Kharab Ke Ahkam Theek Lagne Lagay

Dil Kharab Ke Ahkam Theek Lagne Lagay
Liye jo faisle nakam theek lagne lagay

Mira shumaar unn hi sar phiron mein hota hai
Jenhein udaasi sar sham theek lagne lagay

Saatun ko khamoshi ki woh aziyat do
Keh ird gird ka kehram theek lagne lagay

Hamari khak peh kooza garon ne mehnat ki
Tu tab yeh farq para daam theek lagne lagay

Chalon tu dil kehe ruk jaye ghoomti dunya
Rukkon tu gardish ayyam theek lagne lagay

Hamari tootnay ke baad aisi halat hai
Keh ghar ke hasta do-o-bam theek lagne lagay

Kabhi lagay nahi mujh se bura sulook howa
Kabhi Kahani ka anjam theek lahne lagay
 
Ghalat ko itne tasalsul se theek kehte raho
Keh jo ghalat ho wahi kam theek lagne lagay

Dil kharab ke ahkam theek lagne lagay
Liye jo faisle nakam theek lagne lagay
غزل
دل خراب کے احکام ٹھیک لگنے لگے
لیئے جو فیصلے ناکام ٹھیک لگنے لگے

مرا شمار اُن ہی سر پھروں میں ہوتا ہے
جنہیں اُداسی سر شام ٹھیک لگنے لگے

ساعتوں کو خموشی کی وہ اذیت دو
کہ اردگرد کا کہرام ٹھیک لگنے لگے

ہماری خاک پہ کوزہ گروں نے محنت کی
تو تب یہ فرق پڑا دام ٹھیک لگنے لگے

چلوں تو دل کہے رک جائے گھومتی دنیا
رکوں تو گردش ایام ٹھیک لگنے لگے

ہماری ٹوٹنے کے بعد ایسی حالت ہے
کہ گھر کے حستہ در و بام ٹھیک لگنے لگے

کبھی لگے نہیں مجھ سے برا سلوک ہوا
کبھی کہانی کا انجام ٹھیک لگنے لگے

غلط کو اِتنے تسلسل سے ٹھیک کہتے رہو
کہ جو غلط ہو وہی کام ٹھیک لگنے لگے

دل خراب کے احکام ٹھیک لگنے لگے
لیئے جو فیصلے ناکام ٹھیک لگنے لگے

اپنا تبصرہ بھیجیں