Dehaan-O-Derecha Chasham-E-Karam Kiye Howay|Anwar shoor ghazal

Dehaan-O-Derecha Chasham-E-Karam Kiye Howay

Dehaan-O-Darecha Chasham-E-Karam Kiye Howay Hain
Baithe hain apne dasht ko bagh-e-iram kiye howay hain
 
Dekh raha hun dour mein sare surahi-o-subo
Jaam-e-safal-e-sabar ko saghir-e-jam kiye howay
 
Subha wo jitni dair tak bagh mein goomta raha
Saro saman khare rahe Gardanen kham kiye howay
 
Us ke jawab ki mujhe aj bhi hai umeed si
Jaise howay hun char din haal raqam kiye howay
 
Aye mere hum nowa aao aaj bohot shaben hoi 
Naara zana howay howay , dam hama dam kiye howay
 
Raat Muasaron mein ham lay gay ghazal sho’our
Pohnche hawa ke samne shama-e-ilm kiye howay
 
Dehaan-o- darecha chasham-e-karam kiye howay hain
Baithe hain apne dasht ko bagh-e-iram kiye howay hain
غزل
دھیان وا دریچہء چشم کرم کیے ہوئے ہیں
بیٹھے ہیں اپنے دشت کو باغ ارم کیے ہوئے ہیں
 
دیکھ رہا ہوں دَور میں سارے صراحی و سبو
جامِ سفالِ صبر کو ساغرِ جم کیے ہوئے
 
صبح وہ جتنی دیر تک باغ میں گھومتا رہا
سرو ثمن کھڑے رہے گردنیں خم کیے ہوئے
 
اُس کے جواب کی مجھے آج بھی ہے امید سی
جیسے ہوئے ہوں چار دن حال رقم کیے ہوئے
 
اے میرے ہم نواؤ آؤ آج بہت شبیں ہوئی
نعرہ زناں ہوئے ہوئے، دَم ہمہ دَم کیے ہوئے
 
رات معاصروں میں ہم لے کے گئے غزل شعور
پہنچے ہوا کے سامنے شمع عَلم کیے ہوئے
 
دھیان وا دریچہء چشم کرم کیے ہوئے ہیں
بیٹھے ہیں اپنے دشت کو باغ ارم کیے ہوئے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں