Be Sabab Hijr Ke Malbay Se Uthai Dastak

Be Sabab Hijr Ke Malbay Se Uthai Dastak

Be Sabab Hijr Ke Malbay Se Uthai Dastak
Koi sunta hi nahi, chekh duhai dastak

Dard thokar se hila aaya hai andar ke kiwar
Ab yeh dharkan hai ya seenay mein samai dastak

Aisa lagta hai koi bechhra howa aaya hai
Kis ne shoridaa hawaon ko sikhai dastak

Tum ne aawaz peh rakhi thi samaat markooz
Tum ne sunn paye kabhi hath peh aai dastak

Phir mein yeh qufal bhala kholnay aai kaise
Mein to pehchanti thi khoob pari dastak

Uss ne bas teen talak gun ke mujhe maar diya
Mein ne so baar yeh aawaz lagai dastak

Be sabab hijr ke malbay se uthai dastak
Koi sunta hi nahi, chekh duhai dastak
غزل
بے سبب ہجر کےملبے سے اُٹھائی دستک
کوئی سنتا ہی نہیں ، چیخ ، دُہائی دستک

درد ٹھوکر سے ہلا آیا ہے اندر کے کِواڑ
اب یہ دھڑکن ہے یا سینے میں سمائی دستک

ایسا لگتا ہے کوئی بچھڑا ہوا آیا ہے
کس نے شوریدہ ہواؤں کو سکھائی دستک

تم نے آواز پہ رکھی تھی سماعت مرکوز
تم نے سن پائے کبھی ہاتھ پہ آئی دستک

پھر میں یہ قفل بھلا کھولنے آئی کیسے
میں تو پہچانتی تھی خوب ، پرائی دستک

اُس نے بس تین تلک گن کے مجھے مار دیا
میں نے سو بار یہ آواز لگائی ، دستک

بے سبب ہجر کےملبے سے اُٹھائی دستک
کوئی سنتا ہی نہیں ، چیخ ، دُہائی دستک
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں